رموز شاعری کلاسیکل شاعری

ارض و سما کو ساغر و پیمانہ کر دیا ۔ غزل جوش ملیح آبادی ۔ بحر، اوزان و اصول تقطیع

ارض و سما کو ساغر و پیمانہ کر دیا رندوں نے کائنات کو میخانہ کر دیا اے حُسن! داد دے کہ تمنائے عشق نے تیری حیا کو عشوہء تُرکانہ کر دیا قُرباں ترے کہ اک نگہ التفات نے دل کی جھِجک کو جراءت رندانہ کر دیا صد شکر درسِ حکمتِ ناحق شناس کو ہم نے رہینِ نعرہء مستانہ کر دیا کچھ روز تک تو نازشِ فرزانگی رہی آخر ہجومِ عقل نے دیوانہ کر دیا دُنیا نے ہر فسانہ “حقیقت“ بنا دیا ہم نے حقیقتوں کو بھی “افسانہ“ کر دیا آواز دو کہ جنسِ دو عالم کو جوش نے قربانِ یک تبسّمِ جانانہ کر دیا جوش ملیح آبادی بحر :- بحر مضارع مثمن اخرب مکفوف محذوف ارکان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ فاعلات ۔۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ فاعلن ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 1212۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 212 ۔۔۔ آخری رکن فاعلن ( 212 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فاعلان ( 1212) بھی جائز ہو گا اشارات ِ تقطیع ار ۔۔۔۔ضو ۔۔۔۔ س ۔۔۔۔۔۔ 122 کو ۔۔۔۔ سا ۔۔۔۔غ ۔۔۔۔۔۔۔ 1212 رو ۔۔۔۔ پے ۔۔۔۔ ما ۔۔۔۔۔ نہ ۔۔۔۔ 1221 کر۔۔۔۔ د ۔۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔۔۔ 212 رن ۔۔۔۔ دوں ۔۔۔۔۔۔۔ نے ۔۔۔۔ 122 کا ۔۔۔۔ ئ ۔۔۔۔۔ نا ۔۔۔۔ ت ۔۔۔۔۔ 1212 کو ۔۔۔۔۔ مے ۔۔۔ خا ۔۔۔۔ نہ ۔۔۔۔1221 کر ۔۔۔۔ د۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔ 212 اصولَ تقطیع یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ جو حروف واؤ کے ساتھ ملکر دوسرے الفاظ کے ساتھ مرکب یا ترکیب بناتے ہیں ان کو یک حرفی وزن میں بھی اٹھایا جا سکتا ہے اور دوحرفی وزن میں بھی درست ہو گا ۔ جیسے اس غزل میں ” ارض و سماں” میں ض کے ساتھ واؤ ملکر ضو کی آواز کے ساتھ موجود ہے سو اس ض+و /ضو کو یہاں بحر دستیاب یک حرفی وزن پر اٹھایا گیا ہے ۔ اگر کسی مصرع میں ایسے الفاظ کیلئے اس بحر میں دو حرفی وزن دستیاب ہو تو انہیں دو حرفی وزن پر بھی اٹھانا درست ہو گا ۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔ ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔ تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھاجائے گا تحریر فاروق درویش

ارض و سما کو ساغر و پیمانہ کر دیا
رندوں نے کائنات کو میخانہ کر دیا

اے حُسن! داد دے کہ تمنائے عشق نے
تیری حیا کو عشوہء تُرکانہ کر دیا

قُرباں ترے کہ اک نگہ التفات نے
دل کی جھِجک کو جراءت رندانہ کر دیا

صد شکر درسِ حکمتِ ناحق شناس کو
ہم نے رہینِ نعرہء مستانہ کر دیا

کچھ روز تک تو نازشِ فرزانگی رہی
آخر ہجومِ عقل نے دیوانہ کر دیا

دُنیا نے ہر فسانہ “حقیقت“ بنا دیا
ہم نے حقیقتوں کو بھی “افسانہ“ کر دیا

آواز دو کہ جنسِ دو عالم کو جوش نے
قربانِ یک تبسّمِ جانانہ کر دیا

جوش ملیح آبادی

بحر :- بحر مضارع مثمن اخرب مکفوف محذوف

ارکان ۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ فاعلات ۔۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ فاعلن
ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔ 1212۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔ 212 ۔۔۔

آخری رکن فاعلن ( 212 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فاعلان ( 1212) بھی جائز ہو گا

اشارات ِ تقطیع

ار ۔۔۔۔ضو ۔۔۔۔ س ۔۔۔۔۔۔ 122
کو ۔۔۔۔ سا ۔۔۔۔غ ۔۔۔۔۔۔۔ 1212
رو ۔۔۔۔ پے ۔۔۔۔ ما ۔۔۔۔۔ نہ ۔۔۔۔ 1221
کر۔۔۔۔ د ۔۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔۔۔ 212

رن ۔۔۔۔ دوں ۔۔۔۔۔۔۔ نے ۔۔۔۔ 122
کا ۔۔۔۔ ئ ۔۔۔۔۔ نا ۔۔۔۔ ت ۔۔۔۔۔ 1212
کو ۔۔۔۔۔ مے ۔۔۔ خا ۔۔۔۔ نہ ۔۔۔۔1221
کر ۔۔۔۔ د۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔ 212

اصولَ تقطیع

یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ جو حروف واؤ کے ساتھ ملکر دوسرے الفاظ کے ساتھ مرکب یا ترکیب بناتے ہیں ان کو یک حرفی وزن میں بھی اٹھایا جا سکتا ہے اور دوحرفی وزن میں بھی درست ہو گا ۔ جیسے اس غزل میں ” ارض و سماں” میں ض کے ساتھ واؤ ملکر ضو کی آواز کے ساتھ موجود ہے سو اس ض+و /ضو کو یہاں بحر دستیاب یک حرفی وزن پر اٹھایا گیا ہے ۔ اگر کسی مصرع میں ایسے الفاظ کیلئے اس بحر میں دو حرفی وزن دستیاب ہو تو انہیں دو حرفی وزن پر بھی اٹھانا درست ہو گا ۔

“کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔ تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھاجائے گا

تحریر فاروق درویش

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: