رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

عشق جب بن کے خدا دل کے قریں رہتا ہے ۔ فاروق درویش


tallعشق جب بن کے خدا دل کے قریں رہتا ہے
پھر زمانے کے کہاں زیر ِ نگیں رہتا ہے

آج خوابوں کے طلسمات میں کھوئی  ہے حیات
کل ہی مل جائے گی تعبیر یقیں رہتا ہے

روشنی ڈھونڈنے نکلا تھا جو میخانوں میں
قصرِ ظلمت میں وہ اب تخت نشیں رہتا ہے

بے حجابی ہے تری مہر منور کی طرح
چاند بدلی سے جو نکلے تو حسیں رہتا ہے

قید ِ تنہائی سے نکلے گا تو مر جائے گا
دل جو محمل کے قریں گوشہ نشیں رہتا ہے

جب سے اترا ہے وہ نظروں  میں  حسیں  ماہِ جبیں
دل کے پردوں میں کہیں پردہ نشیں رہتا ہے

میں گدائے شہہ ِ لولاک، دو عالم ہیں مرے
میری نظروں میں یہیں خلدِ بریں  رہتا ہے

رات درویش کی آنکھوں میں چمکتے ہیں نجوم
دل میں اک چاند حسیں سجدہ نشیں رہتا ہے

۔

(فاروق درویش)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بحر :- بحر رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع

ارکان :- ۔۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعلُن
ہندسی اوزان ۔۔۔ 2212۔۔۔ 2211 ۔۔۔ 2211 ۔۔۔ 22 ۔۔

اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل یا نظم میں درج ذیل آٹھ اوزان ایک ساتھ استعمال کرنے کی عروضی گنجائش موجود ہے ۔

۔1 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فعلُن ۔۔۔ 2212 …2211 ..2211 … 22 ۔
۔2 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلُن ۔۔2212 …2211 ….2211 …211 ۔
۔3 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعلان۔۔2212 …2211 …2211 …122 ۔
۔4 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلان 2212 …2211…2211…1211۔
۔5 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فعلُن ۔۔2211 …2211 ….2211 …22 ۔
۔6 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فعلان۔۔2211…2211..2211…. 122 ۔
۔7 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلُن۔۔2211 ..2211 …. 2211 … 211
۔8 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلان۔۔2211…2211….2211…1211۔

تقطیع

عش ۔۔۔۔ ق۔۔۔ جب ۔۔۔ بن ۔۔۔۔۔ 2212
کے ۔۔۔خ ۔۔۔۔ دا ۔۔۔۔۔ دل ۔۔۔۔۔۔۔ 2211
کے ۔۔۔ ق۔۔۔۔۔ ری ۔۔۔۔ رہ ۔۔۔۔۔۔ 2211
تا ۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 22

پھر ۔۔۔ ز۔۔۔۔۔ ما۔۔۔۔۔ نے ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2212
کے۔۔۔ ک ۔۔۔ ہاں ۔۔۔۔۔ زے ۔۔۔۔ 2211
رے ۔۔۔۔ ن ۔۔ گیں ۔۔۔رہ ۔۔۔۔۔۔۔ 2211
تا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔22

اصولِ تقطیع

یاد رکھئے کہ ” کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح جس اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

فاروق درویش

اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

3 Comments

Click here to post a comment

Leave a Reply

  • جناب محترم فاروق درویش جی

    اللہ آپ کو سلامت رکھے دنیا و آخرت کی عزّتیں مرحمت فرمائے ،بے حد اچھا سلسلہ شروع کیا ہے آپ نے اس نئے بلاگ کو اللہ دن دوگنی رات چوگنی ترقّی عطا فرمائے ۔اور اس بلاگ سے سارے عالم کو حق کی دعوت اور محنت پر کاربند فرمائے اور ہر خاص و عام کو اس سے اسکے آباد کرنے والوں سے مستفیض فرمائے اور ہم سب کو رسول پاک علیہ صلوٰت وسلام کا معاون و مددگار فرمائے اور رہتی دنیا کو اس بلاگ سے بہرہ ور فرمائے ،اور اسکی برکت سے ہم سب کا خاتمہ ایمان پر فرمائے

    اللہ اپ کو جزائے خیر عطا فرمائے

    نیاز مند

    اسماعیل اعجاز خیال

  • میں نے اردو میں ماسٹرز کیا ہے لیکن مجھے تقطیع کی کبھی درست سمجھ نہیں آئی آپ نے ماشاءاللہ بہت اچھے طریقے سے سمجھایا ہے۔

Featured

%d bloggers like this: