کلاسیکل شاعری

جس جا نسیم شانہ کشِ زلفِ یار ہے۔ کلامِ غالب، بحر و اوزان


جس جا نسیم شانہ کشِ زلفِ یار ہے
نافہ دماغِ آہوئے دشتِ تتار ہے

کس کا سرا غِ جلوہ ہے حیرت کو اے خدا
آیئنہ فرشِ شش جہتِ انتظار ہے

ہے ذرہ ذرہ تنگئِ جا سے غبارِ شوق
گردام یہ ہے و سعتِ صحرا شکار ہے

دل مدّعی و دیدہ بنا مدّعا علیہ
نظارے کا مقدّمہ پھر روبکار ہے

چھڑکے ہے شبنم آئینۂ برگِ گل پر آب
اے عندلیب وقتِ ود اعِ بہار ہے

پچ آپڑی ہے وعدۂ دلدار کی مجھے
وہ آئے یا نہ آئے پہ یاں انتظار ہے

بے پردہ سوئے وادئِ مجنوں گزر نہ کر
ہر ذرّے کے نقاب میں دل بے قرار ہے

اے عندلیب یک کفِ خس بہرِ آشیاں
طوفانِ آمد آمدِ فصلِ بہار ہے

دل مت گنوا، خبر نہ سہی سیر ہی سہی
اے بے دماغ آئینہ تمثال دار ہے

غفلت کفیلِ عمر و اسد ضامنِ نشاط
اے مر گِ ناگہاں تجھے کیا انتظار ہے

بحر: ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مَفعُولُ ۔۔۔۔۔۔ فاعِلاتُ ۔۔۔۔۔۔ مَفاعِیلُ ۔۔۔۔۔۔ فاعِلُن
ہندسی اوزان : ۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1212 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔۔۔ 212

آخری رکن فاعلن ( 212) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فاعلان ( 1212) بھی آ سکتا ہے۔ جیسے پانچویں شعر کے پہلے مصرع میں ،، آب ،، کی ،،ب،، اور مقطع کے پہلے مصرع میں ،، نشاط،، کی ،، ط،، اسی اصول کے تحت اضافی  باندھی گئی ہے

تقطیع

جس جا نسیم شانہ کشِ زلفِ یار ہے

جس ۔۔۔۔۔۔جا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 122
سی۔۔۔۔م ۔۔۔۔۔ شا۔۔۔۔۔۔۔نہ ۔۔۔۔۔۔ 1212
ک۔۔۔۔شے ۔۔۔۔۔زل ۔۔۔۔۔ فے ۔۔۔۔۔ 1221
یا ۔۔۔ر ۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 212

نافہ دماغِ آہوئے دشتِ تتار ہے

نا۔۔۔۔فہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔د ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 122
ما ۔۔۔۔۔۔ غ۔۔۔۔۔۔ آ ۔۔۔۔ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔ 1212
ئے ۔۔۔۔۔دش۔۔۔۔۔تے۔۔۔ ت۔۔۔۔ 1221
تا ۔۔۔۔۔۔۔۔ر۔۔۔۔۔۔۔ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 212

نوٹ : ,,ئے ,, اور ,, ء ,, ۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔۔  حلقہ ء ، ورثہء ، روضہء ، لیلائے ، وفائے  جیسے الفاظ میں ایک حرفی (1) وزن پر باندھنا بھی درست ہے اور دو رکنی وزن ( 2) پر باندھنا بھی جائز ہے۔ جس وزن کی سہولت بحر میں دستیاب ہو

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: