رموز شاعری کلاسیکل شاعری

جس سر کوغرورآج ہے یاں تاجوری کا ۔ غزل میرتقی میر ۔ بحر، اوزان، اصول تقطیع

جس سر کو غرور آج ہے یاں تاج وری کا کل اس پہ یہیں شور ہے پھر نوحہ گری کا آفاق کی منزل سے گیا کون سلامت اسباب لٹا راہ میں یاں ہر سفری کا زنداں میں بھی شورش نہ گئی اپنے جنوں کی اب سنگ مداوا ہے اس آشفتہ سری کا ہر زخمِ جگر داورِ محشر سے ہمارا انصاف طلب ہے تری بیداد گری کا اپنی تو جہاں آنکھ لڑی پھر وہیں دیکھو آئینے کو لپکا ہے پریشاں نظری کا صد موسمِ گُل ہم کو تہِ بال ہی گزرے مقدور نہ دیکھا کبھی بے بال و پری کا اس رنگ سے چمکے ہے پلک پر کہ کہے تو ٹکرا ہے ترا اشک، عقیقِ جگری کا لے سانس بھی آہستہ کہ نازک ہے بہت کام آفاق کی اس کارگہِ شیشہ گری کا ٹک میر جگرِ سوختہ کی جلد خبر لے کیا یار بھروسہ ہے چراغِ سحری کا   ( میر تقی میر ) بحر :- ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف ۔ ارکان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ فعولن ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 221 ۔۔۔ آخری رکن فعولن ( 221 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فعولان ( 1221 ) بھی جائز ہو گا اشارات تقطیع جس ۔۔۔۔۔ سر ۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔ 122 غ ۔۔۔رو ۔۔۔۔۔۔ را۔۔۔۔۔ج ۔۔۔۔۔ 1221  ( یہاں آج کا مد گرا کر “غرور آج ” کو ” غ  ۔۔۔رو۔۔۔ را۔۔۔۔ ج” باندھا گیا ہے ، عروض میں اسے الف وصل گرانا، الف گرانا  یا  کچھ عروض دان  مد گرانا بھی کہتے ہیں ) ہے ۔۔۔ یاں ۔۔۔ تا۔۔۔۔ ج ۔۔۔۔ 1221 و ۔۔۔۔ ری ۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔ 221 کل ۔۔۔۔۔ اس ۔۔۔۔۔۔ پہ ۔۔۔۔۔ 122 ی ۔۔۔ ہی ۔۔۔ شو ۔۔ر ۔۔۔ 1221 ہے ۔۔۔ پھر ۔۔۔ نو ۔۔۔حہ ۔۔۔ 1221 گ ۔۔ری ۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 221 یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔  کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔ ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ  کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر  باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت  یا وصال کے ت یا لام کے نیچے  زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔ اوپر غزل کے مقلع میں چراغ ِ ( چراغے ) کے غے کو دو حرفی وزن میں اٹھایا گیا ہے۔ جبکہ چھٹے شعر میں موسم ِ گل میں (موسمے)  کے مے کو یک حرفی باندھا گیا ہے ۔ سو ایسے الفاظ کے لئے اس جگہ پر جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا۔ تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا تحریر : فاروق درویش

    جس سر کو غرور آج ہے یاں تاج وری کا
کل اس پہ یہیں شور ہے پھر نوحہ گری کا

    آفاق کی منزل سے گیا کون سلامت
اسباب لٹا راہ میں یاں ہر سفری کا

    زنداں میں بھی شورش نہ گئی اپنے جنوں کی
اب سنگ مداوا ہے اس آشفتہ سری کا

    ہر زخمِ جگر داورِ محشر سے ہمارا
انصاف طلب ہے تری بیداد گری کا

    اپنی تو جہاں آنکھ لڑی پھر وہیں دیکھو
آئینے کو لپکا ہے پریشاں نظری کا

    صد موسمِ گُل ہم کو تہِ بال ہی گزرے
مقدور نہ دیکھا کبھی بے بال و پری کا

    اس رنگ سے چمکے ہے پلک پر کہ کہے تو
ٹکرا ہے ترا اشک، عقیقِ جگری کا

    لے سانس بھی آہستہ کہ نازک ہے بہت کام
آفاق کی اس کارگہِ شیشہ گری کا

    ٹک میر جگرِ سوختہ کی جلد خبر لے
کیا یار بھروسہ ہے چراغِ سحری کا

      ( میر تقی میر )

   بحر :- ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف
۔
ارکان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ فعولن
ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 221 ۔۔۔

   آخری رکن فعولن ( 221 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فعولان ( 1221 ) بھی جائز ہو گا

    اشارات تقطیع

جس ۔۔۔۔۔ سر ۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔    122
غ ۔۔۔رو ۔۔۔۔۔۔ را۔۔۔۔۔ج ۔۔۔۔۔ 1221  ( یہاں آج کا مد گرا کر “غرور آج ” کو ” غ  ۔۔۔رو۔۔۔ را۔۔۔۔ ج” باندھا گیا ہے ، عروض میں اسے الف وصل   گرانا، الف گرانا  یا  کچھ عروض دان  مد گرانا بھی کہتے ہیں )
ہے ۔۔۔ یاں ۔۔۔ تا۔۔۔۔ ج ۔۔۔۔  1221
و ۔۔۔۔ ری ۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔   221

کل ۔۔۔۔۔ اس ۔۔۔۔۔۔ پہ ۔۔۔۔۔   122
ی ۔۔۔ ہی ۔۔۔ شو ۔۔ر ۔۔۔ 1221
ہے ۔۔۔ پھر ۔۔۔ نو ۔۔۔حہ ۔۔۔   1221
گ ۔۔ری ۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   221

یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔  کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے  الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ  کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر  باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر  دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت  یا وصال کے ت یا لام کے نیچے  زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔ اوپر غزل کے مقلع میں چراغ ِ ( چراغے ) کے غے کو دو حرفی وزن میں اٹھایا گیا ہے۔ جبکہ چھٹے شعر میں موسم ِ گل میں (موسمے)  کے مے کو یک حرفی  باندھا گیا ہے ۔ سو ایسے الفاظ کے لئے اس جگہ پر جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو  صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

 تحریر : فاروق درویش

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: