رموز شاعری کلاسیکل شاعری

دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی : کلام غالب ۔ بحر، اوزان اورتقطیع

دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی دونوں کو اک ادا میں رضامند کر گئی شق ہو گیا ہے سینہ، خوشا لذّتِ فراغ تکلیفِ پردہ داریء زخمِ جگر گئی وہ بادہ ء شبانہ کی سر مستیاں کہاں اٹھیے بس اب کہ لذّتِ خوابِ سحر گئی اڑتی پھرے ہے خاک مری کوئے یار میں بارے اب اے ہوا ہوسِ بال و پر گئی دیکھو تو دل فریبیء اندازِ نقشِ پا موجِ خرامِ یار بھی کیا گل کتر گئی ہر بو‌الہوس نے حسن پرستی شعار کی اب آبروئے شیوہ ء اہلِ نظر گئی نظّارے نے بھی کام کِیا واں نقاب کا مستی سے ہر نگہ ترے رخ پر بکھر گئی فردا و دی کا تفرِقہ یک بار مٹ گیا کل تم گئے کہ ہم پہ قیامت گزر گئی مارا زمانے نے اسداللہ خاں تمہیں وہ ولولے کہاں وہ جوانی کدھر گئی اسد اللہ خان غالب عروضی نوٹ ارکان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ فاعلات ۔۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ فاعلن ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 1212۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 212 ۔۔۔ آخری رکن فاعلن ( 212 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فاعلان ( 1212) بھی جائز ہو گا ، دوسرے شعر کے مصرع اول “شق ہو گیا ہے سینہ، خوشا لذّتِ فراغ” میں “فراغ ” کا “غ” اسی اصول کے تحت اضافی باندھا گیا ہے۔ دل ۔۔۔ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔ت ۔۔۔۔۔۔۔۔ 122 ری ۔۔۔۔۔۔ن ۔۔۔۔۔ گا۔۔۔۔ ہ ۔۔۔۔۔۔۔ 1212 ج ۔۔۔ گر۔۔۔۔ تک ۔۔۔۔ ا ۔۔۔۔۔۔۔ 1221 تر۔۔۔۔۔۔۔ گ ۔۔۔۔۔۔ ئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 212 دو ۔۔۔۔۔ نو ۔۔۔۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔۔ 122 اک۔۔۔۔ا ۔۔۔۔۔۔دا ۔۔۔۔۔۔۔ میں۔۔۔۔۔ 1212 ر ۔۔ ضا ۔۔۔۔۔۔۔ من ۔۔۔۔۔۔ د ۔۔۔۔۔۔ 1221 کر ۔۔۔۔۔۔۔ گ۔۔۔۔۔۔۔ ئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 212  یہاں مقطع کے مصرع اول کی تقطیع دینا ضروری سمجھتا ہوں، جہاں ” اسد اللہ ” کو ” اَ ۔۔۔۔ سَ ۔۔۔ دل ۔۔۔لا ۔۔۔۔ ہ ”  میں باندھ کر لفظ اللہ کا الف وصل گرایا گیا گیا۔ مارا زمانے نے اسداللہ خاں تمہیں ما ۔۔۔۔۔۔ را ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 122 ما ۔۔۔ نے ۔۔۔۔ نے ۔۔۔۔اَ ۔۔۔۔۔ 1212 سَ ۔۔۔۔دل ۔۔۔ لا ۔۔۔۔۔ ہ ۔۔۔۔۔۔ 1221 خاں ۔۔۔۔۔ ت۔۔۔۔۔۔۔ مے ۔۔۔۔۔۔ 212 یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھیدرست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ اسی طرح ،، ہ،، پر ختم ہونے والے ، حرفہ، حلقہ، کعبہ، نوحہ، قلیہ، سوختہ جیسے الفاظ میں میں “ہ” گرا کر یہ، بہ، قہ ، فہ ، حہ وغیرہ کو یک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہے ۔ لہذا ان کیلئے جو وزن سہولت کے ساتھ دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔ تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، جاں کو جا، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، پتھر کو پتر ، چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا (تحریر فاروق درویش)

دل سے تری نگاہ جگر تک اتر گئی
دونوں کو اک ادا میں رضامند کر گئی

شق ہو گیا ہے سینہ، خوشا لذّتِ فراغ
تکلیفِ پردہ داریء زخمِ جگر گئی

وہ بادہ ء شبانہ کی سر مستیاں کہاں
اٹھیے بس اب کہ لذّتِ خوابِ سحر گئی

اڑتی پھرے ہے خاک مری کوئے یار میں
بارے اب اے ہوا ہوسِ بال و پر گئی

دیکھو تو دل فریبیء اندازِ نقشِ پا
موجِ خرامِ یار بھی کیا گل کتر گئی

ہر بو‌الہوس نے حسن پرستی شعار کی
اب آبروئے شیوہ ء اہلِ نظر گئی

نظّارے نے بھی کام کِیا واں نقاب کا
مستی سے ہر نگہ ترے رخ پر بکھر گئی

فردا و دی کا تفرِقہ یک بار مٹ گیا
کل تم گئے کہ ہم پہ قیامت گزر گئی

مارا زمانے نے اسداللہ خاں تمہیں
وہ ولولے کہاں وہ جوانی کدھر گئی

اسد اللہ خان غالب

عروضی نوٹ

ارکان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ فاعلات ۔۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ فاعلن
ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 1212۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 212 ۔۔۔

آخری رکن فاعلن ( 212 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فاعلان ( 1212) بھی جائز ہو گا ، دوسرے شعر کے مصرع اول “شق ہو گیا ہے سینہ، خوشا لذّتِ فراغ” میں “فراغ ” کا “غ” اسی اصول کے تحت اضافی باندھا گیا ہے۔

دل ۔۔۔ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔ت ۔۔۔۔۔۔۔۔ 122
ری ۔۔۔۔۔۔ن ۔۔۔۔۔ گا۔۔۔۔ ہ ۔۔۔۔۔۔۔ 1212
ج ۔۔۔ گر۔۔۔۔ تک ۔۔۔۔ ا ۔۔۔۔۔۔۔ 1221
تر۔۔۔۔۔۔۔ گ ۔۔۔۔۔۔ ئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 212

دو ۔۔۔۔۔ نو ۔۔۔۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔۔ 122
اک۔۔۔۔ا ۔۔۔۔۔۔دا ۔۔۔۔۔۔۔ میں۔۔۔۔۔ 1212
ر ۔۔ ضا ۔۔۔۔۔۔۔ من ۔۔۔۔۔۔ د ۔۔۔۔۔۔ 1221
کر ۔۔۔۔۔۔۔ گ۔۔۔۔۔۔۔ ئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 212

 یہاں مقطع کے مصرع اول کی تقطیع دینا ضروری سمجھتا ہوں، جہاں ” اسد اللہ ” کو ” اَ ۔۔۔۔ سَ ۔۔۔ دل ۔۔۔لا ۔۔۔۔ ہ ”  میں باندھ کر لفظ اللہ کا الف وصل گرایا گیا گیا۔

مارا زمانے نے اسداللہ خاں تمہیں

ما ۔۔۔۔۔۔ را ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 122
ما ۔۔۔ نے ۔۔۔۔ نے ۔۔۔۔اَ ۔۔۔۔۔ 1212
سَ ۔۔۔۔دل ۔۔۔ لا ۔۔۔۔۔ ہ ۔۔۔۔۔۔ 1221
خاں ۔۔۔۔۔ ت۔۔۔۔۔۔۔ مے ۔۔۔۔۔۔ 212

یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھیدرست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ اسی طرح ،، ہ،، پر ختم ہونے والے ، حرفہ، حلقہ، کعبہ، نوحہ، قلیہ، سوختہ جیسے الفاظ میں میں “ہ” گرا کر یہ، بہ، قہ ، فہ ، حہ وغیرہ کو یک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہے ۔ لہذا ان کیلئے جو وزن سہولت کے ساتھ دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔ تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، جاں کو جا، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، پتھر کو پتر ، چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

(تحریر فاروق درویش)

اپنی رائے سے نوازیں

Featured

%d bloggers like this: