کلاسیکل شاعری

دیکھ تو دل کہ جاں سے اٹھتا ہے ۔ میر تقی میر


دیکھ تو دل کہ جاں سے اُٹھتا ہے
یہ دھواں سا کہاں سے اٹھتا ہے

گور کس دل جلے کی ہے یہ فلک
شعلہ اک صبح یاں سے اٹھتا ہے

خانۂ دل سے زینہار نہ جا
کوئی ایسے مکاں سے اٹھتا ہے!

نالہ سر کھینچتا ہے جب میرا
شور اک آسماں سے اُٹھتا ہے

لڑتی ہے اُس کی چشمِ شوخ جہاں
ایک آشوب واں سے اٹھتا ہے

سدھ لے گھر کی بھی شعلۂ آواز
دُود کچھ آشیاں سے اُٹھتا ہے

بیٹھنے کون دے ہے پھر اُس کو
جو ترے آستاں سے اُٹھتا ہے

یوں اُٹھے آہ اُس گلی سے ہم
جیسے کوئی جہاں سے اٹھتا ہے

عشق اک میر بھاری پتھر ہے
کب یہ تجھ ناتواں سے اٹھتا ہے

غزل میر تقی میر

عروضی تجزیہ

بحر : بحر خفیف مسدس مخبون محذوف مقطوع

ارکان ِ بحر : ۔۔۔۔۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔ مُفاعِلُن۔۔۔۔۔۔ فَعلُن
ہندسی اوزان : ۔۔۔ 2212 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔2121 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔22

نوٹ : پہلے رکن فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211) بھی جائز ہے، اسی طرح آخری رکن یعنی فعلن (22) کی جگہ فعلان ( 122) ، فَعِلن( 211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آسکتا ہے ۔

مثال ِتقطیع

دی/ک / تو / دل ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2212
کہ/ جا / سے ۔۔۔۔۔۔۔ اٹھ ۔۔۔۔۔ 2121
تا / ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 22

یہ /۔دھ ۔/ واں۔ / سا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2212
ک ۔/ ۔ہاں ۔/ سے ۔/ اٹھ ۔۔۔۔ 2121
تا ۔/ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 22

گو / ر / کس / دل ۔۔۔۔۔ 2212
ج / لے ۔/ کی ۔/ ہے ۔۔۔ 2121
(یہ / ف ۔/ لک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 211 ۔۔۔۔۔ ( یہاں آخری فعلن ( 22 ) کی جگہ فَعِلن ( 211) لگایا گیا ہے )

شع ۔/ لہ ۔/ اک ۔/ صب ۔۔ 2212
ح / یاں / سے / اٹھ ۔۔۔ 2121
تا / ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔22

یاد رہے کہ ،، ھ،، نون غنہ تقطیع میں شمار نہیں ہوں گے یعنی کھ کو ک اور یاں کو یا سمجھا جائے گا ۔ ۔ کہ، یہ، جو، کو،  کے، وہ، سو، ہے، ہیں، تھا، تھے، میں ، لہ ، قہ  ، جہ جیسے اکہیری آواز والے  الفاظ کو یک رکنی وزن میں باندھنا بھی جائز ہے اور دو رکنی وزن میں بھی جائز ہیں، سو ان الفاظ کیلئے جس وزن کی سہولت دستیاب یو درست ہے

تحریر : فاروق درویش

اپنی رائے سے نوازیں

Featured

%d bloggers like this: