دورحاضر کے شعرا رموز شاعری

روگ ایسے بھی غمِ یار سے لگ جاتے ہیں۔ غزل احمد فراز۔ بحر، اوزان و اصول تقطیع

روگ ایسے بھی غمِ یار سے لگ جاتے ہیں در سے اُٹھتے ہیں تو دیوار سے لگ جاتے ہیں عشق آغاز میں ہلکی سی خلش رکھتا ہے بعد میں سینکڑوں آزار سے لگ جاتے ہیں پہلے پہلے ہوس اک آدھ دکاں کھولتی ہے پھر تو بازار کے بازار سے لگ جاتے ہیں بے بسی بھی کبھی قربت کا سبب بنتی ہے رو نہ پائیں تو گلے یار سےلگ جاتے ہیں کترنیں غم کی جو گلیوں میں اڑی پھرتی ہیں گھر میں لے آؤ تو انبار سے لگ جاتے ہیں داغ دامن کے ہوں، دل کے ہوں کہ چہرے کے فراز کچھ نشاں عمر کی رفتار سے لگ جاتے ہیں احمد فراز بحر : بحرِ رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع اراکین بحر : ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔۔۔ فَعلُن ہندسی اوزان :۔۔۔۔۔۔۔ 2212۔۔۔۔۔۔۔۔2211۔۔۔۔۔۔۔2211۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔22۔۔ اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل میں درج کردہ یہ آٹھ اوزان استعمال کرنے کی عروضی سہولت یا گنجائش موجود ہے ۔۔1۔۔۔۔۔ 2212 ….2211 ..2211….22 ۔ ۔۔2 ۔۔۔۔ 2212 ….2211 ….2211 ….211 ۔ ۔۔3۔۔۔۔2212 ….2211 ….2211 …. 122 ۔ ۔۔4۔۔۔۔ 2212 ….2211…2211…..1211۔ ۔۔5۔۔۔ 2211 ….2211 ….2211….22 ۔ ۔۔6۔۔۔۔2211….2211..2211…122 ۔ ۔۔7۔۔۔۔2211 ….2211 ….2211 …211 ۔۔8۔۔2211….2211….2211….1211۔ اشارات برائے تقطیع رو ۔۔۔۔ گ ۔۔۔۔اے ۔۔۔ سے ۔۔۔۔ 2212 بی ۔۔۔۔ غ ۔۔۔۔ مے ۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔ 2211 ر ۔۔۔۔ سے ۔۔۔۔ لگ ۔۔۔۔ جا ۔۔۔ 2211 تے ۔۔۔۔ ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 22 در ۔۔۔۔ سے ۔۔۔ اٹھ ۔۔۔ تے ۔۔۔۔ 2212 ہیں ۔۔۔۔ تو ۔۔۔ دی ۔۔۔وا ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2211 ر ۔۔۔۔ سے ۔۔۔۔لگ ۔۔۔ جا ۔۔۔۔۔۔ 2211 تے ۔۔۔۔ ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 22 اس غزل کے تیسرے شعر کا یہ پہلا مصرع تقطیع کے اعتبار سے سمجھنا اہم ہے ” پہلے پہلے ہوس اک آدھ دکاں کھولتی ہے” پہہ ۔۔۔۔۔۔ لے ۔۔۔۔۔ پہلے ۔۔۔۔۔ 2212 ہَ ۔۔۔۔ وَ ۔۔۔۔۔سک ۔۔۔۔ آ ۔۔۔۔۔۔ 2211 ( یہاں ” “ہوس” کو اک سے ملا کر “اک” کا الف گرایا گیا ہے) دھ ۔۔۔۔ د ۔۔۔۔ کاں ۔۔۔ کھو ۔۔۔۔ 2211 (ل ۔۔۔۔ تی ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔ 211 ( یہاں فعلن یعنی 22 کی بجائے فَعِلن یعنی 211 استعمال کیا گیا ہے) یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔ ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔  اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔ تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا تحریر فاروق دریش

روگ ایسے بھی غمِ یار سے لگ جاتے ہیں
در سے اُٹھتے ہیں تو دیوار سے لگ جاتے ہیں

عشق آغاز میں ہلکی سی خلش رکھتا ہے
بعد میں سینکڑوں آزار سے لگ جاتے ہیں

پہلے پہلے ہوس اک آدھ دکاں کھولتی ہے
پھر تو بازار کے بازار سے لگ جاتے ہیں

بے بسی بھی کبھی قربت کا سبب بنتی ہے
رو نہ پائیں تو گلے یار سےلگ جاتے ہیں

کترنیں غم کی جو گلیوں میں اڑی پھرتی ہیں
گھر میں لے آؤ تو انبار سے لگ جاتے ہیں

داغ دامن کے ہوں، دل کے ہوں کہ چہرے کے فراز
کچھ نشاں عمر کی رفتار سے لگ جاتے ہیں

احمد فراز

بحر : بحرِ رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع

اراکین بحر : ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔۔۔ فَعلُن
ہندسی اوزان :۔۔۔۔۔۔۔ 2212۔۔۔۔۔۔۔۔2211۔۔۔۔۔۔۔2211۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔22۔۔

اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل میں درج کردہ یہ آٹھ اوزان استعمال کرنے کی عروضی سہولت یا گنجائش موجود ہے

۔۔1۔۔۔۔۔ 2212 ….2211 ..2211….22 ۔
۔۔2 ۔۔۔۔ 2212 ….2211 ….2211 ….211 ۔
۔۔3۔۔۔۔2212 ….2211 ….2211 …. 122 ۔
۔۔4۔۔۔۔ 2212 ….2211…2211…..1211۔
۔۔5۔۔۔ 2211 ….2211 ….2211….22 ۔
۔۔6۔۔۔۔2211….2211..2211…122 ۔
۔۔7۔۔۔۔2211 ….2211 ….2211 …211
۔۔8۔۔2211….2211….2211….1211۔

اشارات برائے تقطیع

رو ۔۔۔۔ گ ۔۔۔۔اے ۔۔۔ سے ۔۔۔۔ 2212
بی ۔۔۔۔ غ ۔۔۔۔ مے ۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔ 2211
ر ۔۔۔۔ سے ۔۔۔۔ لگ ۔۔۔۔ جا ۔۔۔ 2211
تے ۔۔۔۔ ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 22

در ۔۔۔۔ سے ۔۔۔ اٹھ ۔۔۔ تے ۔۔۔۔ 2212
ہیں ۔۔۔۔ تو ۔۔۔ دی ۔۔۔وا ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2211
ر ۔۔۔۔ سے ۔۔۔۔لگ ۔۔۔ جا ۔۔۔۔۔۔ 2211
تے ۔۔۔۔ ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 22

اس غزل کے تیسرے شعر کا یہ پہلا مصرع تقطیع کے اعتبار سے سمجھنا اہم ہے
” پہلے پہلے ہوس اک آدھ دکاں کھولتی ہے”

پہہ ۔۔۔۔۔۔ لے ۔۔۔۔۔ پہلے ۔۔۔۔۔ 2212
ہَ ۔۔۔۔ وَ ۔۔۔۔۔سک ۔۔۔۔ آ ۔۔۔۔۔۔ 2211 ( یہاں ” “ہوس” کو اک سے ملا کر “اک” کا الف گرایا گیا ہے)
دھ ۔۔۔۔ د ۔۔۔۔ کاں ۔۔۔ کھو ۔۔۔۔ 2211
(ل ۔۔۔۔ تی ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔ 211 ( یہاں فعلن یعنی 22 کی بجائے فَعِلن یعنی 211 استعمال کیا گیا ہے)

یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

 اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

تحریر فاروق دریش

اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

6 Comments

Click here to post a comment

Leave a Reply

  • “اوپر غزل کے مطلع میں چراغ ِ ( چراغے ) کے غے کو دو حرفی وزن میں اٹھایا گیا ہے۔”
    Mager mujy upar wali gazal me Lafaz Chhirag aur “Mosam” nhi mila.

    • برادر حیدر نشاندھی کیلئے ممنون ہوں ۔دراصل وہ میر تقی میر کی غزل کیلئے لکھی گئی لائنز غلطی سے یہاں بھی پیسٹ ہو گئیں تھی ۔۔۔۔۔۔ معذرت قبول کیجئے

  • سبحان اللہ!
    غزل کا اصل مزہ آ گیا ہے تقطیع کے ساتھ۔
    میرے لئے تو دہری خوشی کی بات ہے آپ کو یہ غزل پسند آئی۔
    ایک سوال ہے کہ
    یہاں فعلن یعنی 22 کی بجائے فَعَلن یونی 2211 استعمال کیا گیا ہے
    لیکن
    فَعِلُن پروزن 211 ہو گا جو شاید غلطی سے 2211 لکھا گیا ہے۔

    • جی بلال میاں شکریہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ غلطی کی نشاندھی کیلئے ممنون ہوں۔ ٹائیپنگ ایرر تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سدا خوش آباد و خوش مراد

  • Hay. Meri kya mjaal ke me Ustad-e-Muhtram se ye kehlwaoun ke “Mazrat”.

    Mujy ye kehna he ap se ke koi post sirf is pr rkhein jis me 2211 22 فَعَلن wagera ka kuch taruf dia gya ho. Taky tajziy prny aur smjny me asani ho.

    (Mujy km ilm ko ye bi nhi pta he ye hoty kya hen).

Featured

%d bloggers like this: