دورحاضر کے شعرا رموز شاعری

غزل ساغر صدیقی ۔ بحر و اوزان اور اصول تقطیع


    جب گلستاں میں بہاروں کے قدم آتے ہیں
یاد بُھولے ہوئے یاروں کے کرم آتے ہیں

    لوگ جس بزم میں آتے ہیں ستارے لے کر
saghar    ہم اسی بزم میں بادیدہء نم آتے ہیں

    میں وہ اِک رندِ خرابات ہُوں میخانے میں
میرے سجدے کے لیے ساغرِ جم آتے ہیں

     اب مُلاقات میں وہ گرمی ء جذبات کہاں
اب تو رکھنے وہ محبت کا بھرم آتے ہیں

    قُربِ ساقی کی وضاحت تو بڑی مشکل ہے
ایسے لمحے تھے جو تقدیر سے کم آتے ہیں

    میں بھی جنت سے نکالا ہُوا اِک بُت ہی تو ہُوں
ذوقِ تخلیق تجھے کیسے ستم آتے ہیں

    چشم ساغر ہے عبادت کے تصوّر میں سدا
دل کے کعبے میں خیالوں کے صنم آتے ہیں


ساغر صدیقی

بحر : بحرِ رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع

اراکین بحر : ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فعلُن
ہندسی اوزان :۔۔۔۔ 2212 ۔۔۔۔2211 ۔۔۔۔ 2211 ۔۔۔۔22 ۔۔

اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل یا نظم میں درج ذیل آٹھ اوزان ایک ساتھ استعمال کرنے کی عروضی گنجائش موجود ہے ۔ اس غزل کے چوتھے اور آخری شعر کے مصرع اول میں فعلن (22) کی جگہ فَعِلن “211″ آیا ہے

۔1 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فعلُن ۔۔۔ 2212 …2211 ..2211 … 22 ۔
۔2 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلُن ۔۔2212 …2211 ….2211 …211 ۔
۔3 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعلان۔۔2212 …2211 …2211 …122 ۔
۔4 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلان 2212 …2211…2211…1211۔
۔5 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فعلُن ۔۔2211 …2211 ….2211 …22 ۔
۔6 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فعلان۔۔2211…2211..2211…. 122 ۔
۔7 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلُن۔۔2211 ..2211 …. 2211 … 211
۔8 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلان۔۔2211…2211….2211…1211۔

اشارات تقطیع

جب گلستاں میں بہاروں کے قدم آتے ہیں

جب ۔۔۔۔گ۔۔۔۔ لس ۔۔۔۔ تاں ۔۔۔ فاعلاتن – 2212
میں ۔۔۔۔ ب ۔۔۔۔ ہا ۔۔۔۔ روں ۔۔۔ فعلاتن – 2211
کے ۔۔۔۔ ق ۔۔۔۔ د ۔۔۔۔ آ ۔۔۔۔ فعلاتن – 2211
تے ۔۔۔۔ ہیں ۔۔۔ فعلن ۔۔۔ 22 ۔

یاد بُھولے ہوئے یاروں کے کرم آتے ہیں

یا ۔۔ د ۔۔۔ بھو۔ لے ۔۔۔۔ فاعلاتن – 2212
ہ ۔۔۔ ئے۔۔۔ یا ۔۔۔ روں ۔۔۔ فعلاتن – 2211
ک ۔۔۔ ک۔۔۔ رم ۔۔۔۔ آ ۔۔۔ فعلاتن – 2211
تے ۔۔۔ ہیں ۔۔ فعلن ۔۔۔ 22

تقطیع کرتے ہوئے یاد رکھیے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ ” میرے” یا “تیرے” کے “میم” یا “ت” کیلئے دو حرفی وزن دستیاب نہ ہو تو انہیں یک حرفی میں باندھ کر مِ یا تِ ( زیر کے ساتھ) “مِرے” اور “تِرے” پڑھا جاتا ہے۔ یعنی 2+2 یا 2+1 کا وزن دستیاب ہو تو پورا میرے اور تیرے پڑھا جائے گا اور اگر 1+2 یا 1+1 کا وزن دستیاب ہو تو میم اور ت کو زیر کی آواز کے ساتھ مِرے اور تِرے پڑھا جائے گا ۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

۔( تحریر : فاروق درویش )۔

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: