رموز شاعری کلام فیض احمد فیض

مجھ سے پہلی سی محبت مرے محبوب نہ مانگ ۔ فیض احمد فیض

فیض احمد فیض صاحب کا سخن یا ان کی یہ شہرہء آفاق نظم کسی تعارف کی محتاج نہیں۔ یہاں ان کی یہ خوبصورت نظم، اسکی  بحر و اوزان اوراشارات تقطیع پیش کرنے کا مقصد علم العروض، شاعری کی بحوراور اوزان کاعلم  رکھنے والے معزز احباب سے کچھ سیکھنا یا نئے لکھنے والے دوستوں تک علم بڑھانا  ہے کہ ایسے ہی سیکھنے اور سکھانے کا عمل جاری ہے ۔ مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ میں نے سمجھا تھا کہ تو ہے تو درخشاں ہے حیات تیرا غم ہے تو غمِ دہر کا جھگڑا کیا ہے تیری صورت سے ہے عالم میں بہاروں کو ثبات تیری آنکھوں کے سوا دنیا میں رکھا کیا ہے؟ تو جو مل جائے تو تقدیر نگوں ہو جائے یوں نہ تھا، میں نے فقط چاہا تھا یوں ہو جائے اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا ان گنت صدیوں کے تاریک بہیمانہ طلسم ریشم و اطلس و کمخاب میں بُنوائے ہوئے جابجا بکتے ہوئے کوچہ و بازار میں جسم خاک میں لتھڑے ہوئے خون میں نہلائے ہوئے لوٹ جاتی ہے ادھر کو بھی نظر کیا کیجے اب بھی دلکش ہے ترا حسن مگر کیا کیجے اور بھی دکھ ہیں زمانے میں میں محبت کے سوا راحتیں او ربھی ہیں وصل کی راحت کے سوا مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ ۔ فیض احمد فیض ۔ بحر : بحرِ رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع اراکین بحر : ۔۔۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔۔۔ فَعلُن ہندسی اوزان :۔۔۔۔ 2212 ۔۔۔۔۔۔۔2211 ۔۔۔۔۔ 2211 ۔۔۔۔۔۔22 ۔۔ اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل یا نظم میں درج کردہ یہ آٹھ اوزان استعمال کرنے کی عروضی گنجائش موجود ہے ۔1۔۔۔۔۔ 2212 ….2211 ..2211 ….22 ۔ ۔2 ۔۔۔۔ 2212 ….2211 ….2211 ….211 ۔ ۔3۔۔۔۔2212 ….2211 ….2211 …. 122 ۔ ۔4۔۔۔۔ 2212 ….2211…2211….1211۔ ۔5۔۔۔ 2211 ….2211 ….2211 ….22 ۔ ۔6۔۔۔۔2211….2211..2211….. 122 ۔ ۔7۔۔۔۔2211 .2211 …. 2211 …211 ۔8۔۔2211….2211….2211….1211۔ یہ بحر اور اس کے اوزان کے مطابق تقطیع کو سمجھنے کیلئے چند مصرعوں کی تقطیع پیش کر رہا ہوں مجھ ۔۔۔۔ سے ۔۔۔ پہ ۔۔۔ لی ۔۔۔۔ 2212 سی ۔۔۔۔ م ۔۔۔۔ حب ۔۔۔ بت ۔۔۔۔ 2211 م ۔۔۔۔ رے ۔۔۔۔۔ مح ۔۔۔۔۔۔۔ بو ۔۔۔۔۔۔ 2211 ب ۔۔۔۔۔ نہ ۔۔۔۔ ما ۔۔۔۔ نگ ۔۔۔۔۔۔۔ 1211 ۔( یہاں فعلن (2.2) کی جگہ فَعِلان ( 1.2.1.1 ) آیا ہے ) میں ۔۔۔۔ نے ۔۔۔ سم ۔۔۔۔ جھا ۔۔۔ 2212 تھا ۔۔۔۔ کہ ۔۔۔۔۔۔ تو ۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔ 2211 تو ۔۔۔۔ د ۔۔۔۔۔ رخ ۔۔۔۔۔ شاں ۔۔۔۔۔۔ 2211 ہے ۔۔۔۔ ح ۔۔۔۔۔یا ۔۔۔۔۔ ت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1212 ۔ (یہاں فعلن (2.2) کی جگہ فَعِلان ( 1.2.1.1 ) آیا ہے) ت۔۔۔۔را ۔۔۔۔۔۔غم ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔ 2212 ت ۔۔۔۔۔ غ ۔۔۔۔۔ مے ۔۔۔۔۔ دہ ۔۔۔۔۔۔۔ 2211 ر ۔۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔جھگ ۔۔۔۔۔۔ ڑا ۔۔۔۔۔ 2211 کیا ۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔ 22 رے ۔۔۔۔ ش۔۔۔۔ مو ۔۔۔ اط۔۔۔۔۔ 2212 ل ۔۔۔ سو ۔۔۔۔ کم ۔۔۔ خا ۔۔۔۔۔ 2211 ب ۔۔۔۔ میں ۔۔۔ بندھ ۔۔۔۔ وا ۔۔۔ 2211 ـ ( یہاں بندھوا کا نون غنا ہے سو تقطیع میں “بدوا” لیا جائے گا ئے ۔۔۔ ہ ۔۔۔وے ۔۔۔۔۔۔۔۔ 211 ( یہاں فعلن (2.2) کی بجائے فَعِلن ( 2.1.1) آیا ہے یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔ ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست

فیض احمد فیض صاحب کا سخن یا ان کی یہ شہرہء آفاق نظم کسی تعارف کی محتاج نہیں۔ یہاں ان کی یہ خوبصورت نظم، اسکی  بحر و اوزان اوراشارات تقطیع پیش کرنے کا مقصد علم العروض، شاعری کی بحوراور اوزان کاعلم  رکھنے والے معزز احباب سے کچھ سیکھنا یا نئے لکھنے والے دوستوں تک علم بڑھانا  ہے کہ ایسے ہی سیکھنے اور سکھانے کا عمل جاری ہے

۔

مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ

میں نے سمجھا تھا کہ تو ہے تو درخشاں ہے حیات
تیرا غم ہے تو غمِ دہر کا جھگڑا کیا ہے
تیری صورت سے ہے عالم میں بہاروں کو ثبات
تیری آنکھوں کے سوا دنیا میں رکھا کیا ہے؟
تو جو مل جائے تو تقدیر نگوں ہو جائے
یوں نہ تھا، میں نے فقط چاہا تھا یوں ہو جائے
اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا
راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا

ان گنت صدیوں کے تاریک بہیمانہ طلسم
ریشم و اطلس و کمخاب میں بُنوائے ہوئے
جابجا بکتے ہوئے کوچہ و بازار میں جسم
خاک میں لتھڑے ہوئے خون میں نہلائے ہوئے

لوٹ جاتی ہے ادھر کو بھی نظر کیا کیجے
اب بھی دلکش ہے ترا حسن مگر کیا کیجے
اور بھی دکھ ہیں زمانے میں میں محبت کے سوا
راحتیں او ربھی ہیں وصل کی راحت کے سوا

مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ

۔
فیض احمد فیض
۔

بحر : بحرِ رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع

اراکین بحر : ۔۔۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔۔۔ فَعلُن
ہندسی اوزان :۔۔۔۔ 2212 ۔۔۔۔۔۔۔2211 ۔۔۔۔۔ 2211 ۔۔۔۔۔۔22 ۔۔

اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل یا نظم میں درج کردہ یہ آٹھ اوزان استعمال کرنے کی عروضی گنجائش موجود ہے

۔1۔۔۔۔۔ 2212 ….2211 ..2211 ….22 ۔
۔2 ۔۔۔۔ 2212 ….2211 ….2211 ….211 ۔
۔3۔۔۔۔2212 ….2211 ….2211 …. 122 ۔
۔4۔۔۔۔ 2212 ….2211…2211….1211۔
۔5۔۔۔ 2211 ….2211 ….2211 ….22 ۔
۔6۔۔۔۔2211….2211..2211….. 122 ۔
۔7۔۔۔۔2211 .2211 …. 2211 …211
۔8۔۔2211….2211….2211….1211۔

یہ بحر اور اس کے اوزان کے مطابق تقطیع کو سمجھنے کیلئے چند مصرعوں کی تقطیع پیش کر رہا ہوں

مجھ ۔۔۔۔ سے ۔۔۔ پہ ۔۔۔ لی ۔۔۔۔ 2212
سی ۔۔۔۔ م ۔۔۔۔ حب ۔۔۔ بت ۔۔۔۔ 2211
م ۔۔۔۔ رے ۔۔۔۔۔ مح ۔۔۔۔۔۔۔ بو ۔۔۔۔۔۔ 2211
ب ۔۔۔۔۔ نہ ۔۔۔۔ ما ۔۔۔۔ نگ ۔۔۔۔۔۔۔ 1211 ۔( یہاں فعلن (2.2) کی جگہ فَعِلان ( 1.2.1.1 ) آیا ہے )

میں ۔۔۔۔ نے ۔۔۔ سم ۔۔۔۔ جھا ۔۔۔ 2212
تھا ۔۔۔۔ کہ ۔۔۔۔۔۔ تو ۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔ 2211
تو ۔۔۔۔ د ۔۔۔۔۔ رخ ۔۔۔۔۔ شاں ۔۔۔۔۔۔ 2211
ہے ۔۔۔۔ ح ۔۔۔۔۔یا ۔۔۔۔۔ ت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1212 ۔ (یہاں فعلن (2.2) کی جگہ فَعِلان ( 1.2.1.1 ) آیا ہے)

ت۔۔۔۔را ۔۔۔۔۔۔غم ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔ 2212
ت ۔۔۔۔۔ غ ۔۔۔۔۔ مے ۔۔۔۔۔ دہ ۔۔۔۔۔۔۔ 2211
ر ۔۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔جھگ ۔۔۔۔۔۔ ڑا ۔۔۔۔۔ 2211
کیا ۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔ 22

رے ۔۔۔۔ ش۔۔۔۔ مو ۔۔۔ اط۔۔۔۔۔ 2212
ل ۔۔۔ سو ۔۔۔۔ کم ۔۔۔ خا ۔۔۔۔۔ 2211
ب ۔۔۔۔ میں ۔۔۔ بندھ ۔۔۔۔ وا ۔۔۔ 2211 ـ ( یہاں بندھوا کا نون غنا ہے سو تقطیع میں “بدوا” لیا جائے گا
ئے ۔۔۔ ہ ۔۔۔وے ۔۔۔۔۔۔۔۔ 211 ( یہاں فعلن (2.2) کی بجائے فَعِلن ( 2.1.1) آیا ہے

یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

تحریر فاروق دریش

اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

2 Comments

Click here to post a comment

Leave a Reply

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: