حالات حاضرہ سیکولرازم اور دیسی لبرل

فحش کلامی یا بدیسی لابی کے شرپسند فسادیوں کی فتنہ گری؟


فتنہء قادیانیت اور گستاخین ِ قرآن و رسالت کے خلاف قلمی جہاد کے جرم کی پاداش میں کچھ ناعاقبت اندیش مسخروں، غلیظ الزباں و فحش کلام روشن خیال بلاگرز حضرات کی طرف سے میرے بارے طعن و دشنام کا نہ رکنے والا سلسلہ شروع ہے۔ بدقسمتی سے فتنہ گری کے اس بلاگڑی مشن کی قیادت جاپان میں بیٹھے یاسر خوامخواہ جاپانی المعروف کتوں والی سرکار جیسے ذہنی مریضوں کے ہاتھوں آ چکی ہے۔ یاد رہے کہ انہیں ” خامخواہ” کا نام میں نے نہیں دیا بلکہ یہ ان کا خود اپنا  ہی اختیار کردہ وہ نام ہے جو اس فتنہ پرور، غلیظ الدہن، کریہہ الصورت مسخرے کے خبیث کردار  کا حقیقی آئینہ دار ہے۔ میں شروعات میں برادر نجیب عالم ، برادر سکندر حیات بابا اور برادر منصور مکرم جیسے معزز و محترم احباب کی طرف سے روکے جانے کی وجہ سے خاموش تھا لیکن مابعد ان فتنہ گر عناصر کی طرف سے مسلسل فحش کلامی، ذاتیات پر کھلے حملوں، کذب بیانیوں اور حتیٰ کہ قتل کی کھلی دھمکیوں کے بعد وطن عزیز میں فتنہ و فساد پھیلانے کیلئے کوشاں ان شرپسندوں کی قلمی سرکوبی اشد ضروری ٹھہری ہے۔ بدنام زمانہ گستاخِ اسلام  ” روشنی” اور ” سائیں” جیسے انٹی اسلام و انٹی پاکستان پیجز کے مصدقہ بابی و خالق بلاگرمحمد ورث کے یارانِ غار کی طرف سے دھمکیوں سے مرعوب ہونا درویش کا وطیرہ نہیں۔ لیکن ایسے بلاگران کو عشق رسالت کے سرٹیفیکیٹ دینے والے معزز بلاگرز اور لکھاریوں کی خدمت میں ان پاکیزہ زبان شرفا کی خواتین کے بارے فحش  گفتگو اور قادیانیت کے بارے دلی ہمدردی کے کچھ عکس دے رہا ہوں۔۔ جنہیں پڑھ کر شاید ان کی تعریف و توصیف لکھنے والے صاحبانِ علم و فہم بلاگرز کو بھی کچھ شرم آ جائے۔۔۔

bloger101

سب سے پہلے کچھ معزز بلاگرز کی طرف سے عشق ِ مصطفے کا سرٹیفیکیٹ پانے والے ام المنافق اور فتنہ گر جواد احمد خان کی طرف سے قادیانیوں سے دوستی رکھنے کی مخالفت میں لکھی گئی ایک پوسٹ کی مسلمانہ مخالفت کا حال اس سوال کے ساتھ کہ۔۔۔۔۔ کیا کوئی عاشق رسول قادیانیوں سے دوستی کے خلاف لکھی جانے والی تحریر کی مخالفت میں ایسے ایمان افروز ” بامعنی ” کومنٹ دے گا ؟ سوال یہ ہے کہ بنا بلائے ایک انٹی قادیانیت پوسٹ پر کھلی مخالفت کا مقصد کیا تھا؟ یہ کوئی عاشق رسول بلاگر ہی بتا سکتا ہے ۔۔۔۔۔ کائنات کے بدترین گستاخین قادیانیوں سے دوستی سے پرہیز اور ان سے قطع تعلق رہنے کے موقف کو “شدت پسندی” قرار دینے واالے حضرات یا ان کے مداح و تعریف کنندگان اگر اسے مسلمانی قرار دیتے ہیں، مگر پیروکارین عقیدہء ختم نبوت کی نظر میں ایسی مسلمانی عبداللہ بن ابی اور امریکہ کے پسندیدہ  اسلامی ورژن کی مسلمانی ہے۔ ہمارا موقف کھلا یہی ہے کہ بے شک  اسلام امن کا دین ہے، ہم پاکستان میں ایک پرامن معاشرہ چاہتے ہیں لیکن مسلمہ بن کذاب سیریز نمبر دو مرزا غلام قادیانی کے پیروکار قادیانیوں اور گستاخین قرآن  و رسالت سے دوستی کو بھی قرآن حکیم کے اٹل فیصلے کی رو سے کفر ہی  اگردانتے ہیں ۔۔ اس حوالے سے میری یہ تحریر میرا واضع موقف پیش کرتی ہے

 چناب نگر کے انجہانیوں کا خوابِ اکھنڈ بھارت

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

JAK1

اور اس کے بعد اس مسلم خاتون کے بارے فحش کلامی اور بازاری گفتگو کے سلسلے کے صرف چند ایک نمونے پیش کر رہا ہوں۔۔۔۔ احباب کچھ نمونے ایسے بھی ہیں جو زبان کے از حد پراگندا ہونے کے باعث ناقابلِ اشاعت ہیں۔۔۔۔  یاد رہے کہ یہی نام نہاد شرفا پہلے بھی اس خاتوں کو کھلے عام کبھی ملاں فضل الرحمن کا رشتہ پیش  اور کبھی  دوسرے انتہائی پراگندہ ناموں سے مخاطب کرتے رہے ہیں ، ان کومنٹس کا عکس تحریر کے آخر میں دئے گئے بلاگ لنک کی تحریر میں دیکھا جا سکتا ہے ۔ قابل توجہ اور قابل صد حیرت منافقت ہے کہ ابھی تک کسی بھی  معزز بلاگر یا عشق رسول کے سرٹیفیکیٹ تقسیم کرنے والے لکھاری کو ان فحش کلام بلاگرز کے اس شرمناک طرزِ طوائف خانہ کی مذمت کی جرات تک نہیں ہوئی۔۔۔ بلکہ ان پراگندا مسخروں کی حمایت میں بلاگ اور پیانات کا سلسلہء فتن شروع ہے۔۔۔ ذیل میں دیے گئے عکس میں ان لعنت آلودہ بلاگرزن کی فحش کلامی دیکھ کر بخوبی اندازہ کیا جا سکتا ہے کہ یہ فحش کلام حضرات دراصل بلاگنگ کے نام پر سیاہ دھبہ ہیں۔۔

YJ1A

Yj2A

YJ3a

   احباب یاد رہے کہ اس سے قبل بھی میں ان  بلاگر حضرات کی پاکیزہ خوش کلامی اور ادبی گفتگو کے عکس احباب کی نذر کر چکا ہوں ۔۔۔دلچسب اور انتہائی قابل غور بات یہ ہے کہ ان بلاگر حضرات کی طرف۔ سے مجھے اور میرے رفقا کو انہیں مخصوص ناموں سے مخاطب کیا جا رہا ہے جو پلید نام قادیانی کلٹ کے گستاخینِ قرآن و رسالت استعمال کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ خدا جانے یہ کینیڈا میں بیٹھی یہودی لابی اور قادیانی کلٹ کے ساتھ خفیہ تعلق داریوں اور ” خصوصٰ احکامات ” کا اثر ہے یا کچھ قادیایی فتنہ گر مسلمانی کے بھیس میں اس انجمنِ بلاگراں میں گھس آئے ہیں ؟۔۔۔۔۔ میری دو برس قبل لکھی ایک تحریر آُپ احباب کی عقل کے دریچے کھولنے کیئے دوبارہ پیش خدمت ہے ۔۔۔ جو آج بھی سوال کر رہی ہے کہ کینیڈین یہودی لابی اور کینیڈٰن قادیانی کلٹ کے مصدقہ ایجنٹ اور اسلام دشمن بی بی سی کے بدنام زمانہ اسلام دشمن نمائندے محسن عباس کو  کینیڈا سے دس ہزار میل دور لاہور ہی  آ کر ہی پراسرار فنڈز سے ان بلاگرز کی کانفرنس کروانے اور پاکستانی بلاگرز کو اعزازات و  انعامات سے نوازنے کی کیا ضرورت تھی؟ ۔۔۔۔ آج یہ فحش کلام اور فتنہ گر اردو بلاگر ثابت کر رہے ہیں کہ میرا موقف اور خدشات سو فیصد درست تھے۔ درحقیقت اسلام دشمن یہودی لابی اور قادیانی کلٹ ایسے ہی زرخرید عناصر اور ضمیر فروش بلاگرز کو استعمال کر کے پاکستان میں فتنہ و فساد برپا کرنا چاہتا ہے۔ کینیڈا ، امریکہ اور برطانیہ میں بیٹھے ہوئے یہودہ لابی کے لوگ ایسے بکاؤ مال ضمیر فروشوں کے ذریعے ہی پاکستان میں امن و عامہ کے مسائل پیدا کرتے ہیں۔ گوجرانوالہ جیسے واقعات کے پیچھے ان جیسے ہی شرپسندوں اور فتنہ گروں کا ہاتھ ہوتا ہے۔ دراصل یہی وہ فسادی لوگ ہیں جو بدیسی اغیار کے اشارے پر فتنہ گری کرتے اور سانحوں کی بنیاد کھڑی کرتے ہیں۔۔۔ اس حوالے سے میری یہ پرانی تحریر پیش خدمت ہے۔

سوشل میڈیا پریہودی ومغربی پریس کا اجارہ داری پلان یا لاہورمیں کراچی برانڈ خونی فسادات کا منصوبہ؟

چرب زباں بلاگرز کی طرف سے عاشق رسول قرار دئے جانے والے غلیظ الدہن فتنہء غلاظت بلاگر جواد احمد خان کے تازہ بلاگ کا فحش عنوان ” پاسباں مل گئے کعبے کو کنجر خانے سے ” موصوف کی ” کنجر خانہ خصلت” اس نام نہاد مسلمان  کی پراگندا زبانی کا گواہ اور تعریف کنندگان کے مونہہ پر زوردار طمانچے سے کم نہیں ۔ اپنے بلاگ میں موصوف نے کھل کر اپنی شرارت کا اقرار کیا ہے کہ وہ اس ” جنگ عظیم ” کی وجہ بنے ہیں۔ یعنی دوسرے لفظوں میں اغیار کے اشارے پر فتنہ پھیلانے والے ایک مشکوک ایجنٹ نے غیر دانستہ طور پر اپنے فتنہ و فتنہ خیز ہونے کا اقرار کیا ہے۔۔۔۔ میرے پاس ایسے غلیظ الزباں احمقینِ بے ادب اور ٹھرکی جنسی مریضوں پر ضائع کرنے کیلئے مذید وقت نہیں۔ اور نہ ہی میں کسی کی دھمکیوں اورغنڈہ گردی سےمرعوب ہونے والا بندہء فقیر ہوں۔ سیکولرز مافیہ، فتنہء قادیان اور غدارین وطن کیخلاف میرا پر امن قلمی مشن جاری ہے اور انشاللہ  تادمِ مرگ جاری و ساری رہے  گا۔ اس نام نہاد بلاگری گروہ کی طرف سے کھلی غنڈہ گردی اور دھمکیوں کا جو سلسلہ جاری ہے اس کی تازہ ترین مثال جواد احمد خان کے بلاگ پر میرے لئے باقاعدہ طور پر جاری کی گئی ” آفیشل دھمکی ” کا یہ عکس  اس بلاگری ٹولے کی سائبر دہشت گردی کا ناقابل تردید ثبوت ہے ۔۔۔ یہ لوگ سچے مسلمان ہیں یا مسلمانی کا لبادہ اوڑھے ہوئے ” عقیدہء ختم نبوت کے میر جعفر و میر صادق “۔۔۔ فیصلہ آپ کیجئے ۔۔۔۔۔  ملعون میر جعفر و میر صادق جیسے ننگِ ملک و ملت بھی تو بظاہر  مسلمان ہی تھے ۔۔۔۔۔ کتا برانڈ بلاگر گروہ کی طرف سے میری اور سیددہ سارا غزل کی فیک آئی ڈیز، فیک بلاگ اور فیک پیجز بنا کر فحش کلامیوں کا سلسلہ ہنوز جاری و ساری ہے۔ لعنت اللہ علی الکاذبین۔۔

imran iqbal1

والسلام

( فاروق درویش 03224061000)

۔

اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

2 Comments

Click here to post a comment

Leave a Reply

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

%d bloggers like this: