رموز شاعری ریاست اور سیاست کلاسیکل شاعری

ناوک انداز جدھر دیدہ ء جاناں ہوں گے۔ غزل مومن ۔ بحر و اوزان ، تقطیع


ناوک انداز جدھر دیدہ ء جاناں ہوں گے
نیم بسمل کئی ہوں گے، کئی بے جاں ہوں گے

تابِ نظّارہ نہیں، آئینہ کیا دیکھنے دوں
اور بن جائیں گے تصویر، جو حیراں ہوں گے

تو کہاں جائے گی، کچھ اپنا ٹھکانا کر لے
ہم تو کل خوابِ عدم میں شبِ ہجراں ہوں گے

ایک ہم ہیں کہ ہوئے ایسے پشیمان کہ بس
ایک وہ ہیں کہ جنہیں چاہ کے ارماں ہوں گے

ہم نکالیں گے سن اے موجِ ہوا، بل تیرا
اس کی زلفوں کے اگر بال پریشاں ہوں گے

منّتِ حضرتِ عیسٰی نہ اٹھائیں گے کبھی
زندگی کے لیے شرمندۂ احساں ہوں گے

چاکِ پردہ سے یہ غمزے ہیں، تو اے پردہ نشیں
ایک میں کیا کہ سبھی چاک گریباں ہوں گے

پھر بہار آئی وہی دشت نوردی ہوگی
پھر وہی پاؤں، وہی خارِ مُغیلاں ہوں گے

سنگ اور ہاتھ وہی، وہ ہی سر و داغِ جنوں
وہی ہم ہوں گے، وہی دشت و بیاباں ہوں گے

عمر ساری تو کٹی عشقِ بتاں میں مومن
آخری وقت میں کیا خاک مسلماں ہوں گے

۔

(حکیم مومن خان مومن)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بحر : بحرِ رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع

اراکین بحر : ۔۔۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔۔۔ فَعلُن
ہندسی اوزان :۔۔۔۔ 2212 ۔۔۔۔۔۔۔2211 ۔۔۔۔۔ 2211 ۔۔۔۔۔۔22 ۔۔

اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل یا نظم میں درج کردہ یہ آٹھ اوزان ایک ساتھ استعمال کرنے کی عروضی گنجائش موجود ہے

۔1۔۔۔۔ 2212 ….2211 ..2211 ….22 ۔
۔2 ۔۔۔۔ 2212 ….2211 ….2211 ….211 ۔
۔3 ۔۔۔۔2212 ….2211 ….2211 …. 122 ۔
۔4۔۔۔۔ 2212 ….2211…2211….1211۔
۔5 ۔۔۔ 2211 ….2211 ….2211 ….22 ۔
۔6 ۔۔۔۔2211….2211..2211….. 122 ۔
۔7 ۔۔۔۔2211 .2211 …. 2211 …211
۔8 ۔۔2211….2211….2211….1211۔

تقطیع
ناوک انداز جدھر دیدہ ء جاناں ہوں گے
نیم بسمل کئی ہوں گے، کئی بے جاں ہوں گے

نا ۔۔۔۔و۔۔۔۔۔کن ۔۔۔۔۔ دا ۔۔۔ فاعلاتن – 2212 ( یہاں کاف اور نون کے درمیانی الف یعنی الفِ وصل گرا کر ناوک انداز کو ” نا ۔۔ و۔۔۔ کن ۔۔ داز” باندھا گیا ہے )
ز ۔۔۔۔ج۔۔۔۔در ۔۔۔۔۔ دی ۔۔۔ فعلاتن – 2211
دَہ ۔۔۔۔ ء۔۔۔۔ جا۔۔۔ نا ۔۔۔۔ فعلاتن – 2211
ہوں ۔۔۔۔ گے ۔۔۔ فعلن ۔۔۔ 22

نی ۔۔م ۔۔۔بس۔۔۔مل ۔۔۔۔ فاعلاتن – 2212
ک ۔۔۔ ئی۔۔۔ ہوں ۔۔۔ گے ۔۔۔ فعلاتن – 2211
ک ۔۔۔ ئی ۔۔۔ بے ۔۔۔۔ جاں ۔۔۔ فعلاتن – 2211
ہوں ۔۔۔گے ۔۔۔۔ فعلن ۔۔۔ 22

تقطیع کرتے ہوئے یاد رکھیے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

۔( تحریر : فاروق درویش )۔

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: