رموز شاعری کلام فیض احمد فیض

نہ کسی پہ زخم عیاں کوئی نہ کسی کو فکر رفو کی ہے۔ فیض احمد فیض ۔ بحر و تقطیع

نہ کسی پہ زخم عیاں کوئی، نہ کسی کو فکر رفو کی ہے نہ کرم ہے ہم پہ حبیب کا، نہ نگا ہ ہم پہ عدو کی ہے صفِ زاہداں ہے تو بے یقیں، صفِ میکشاں ہے تو بے طلب نہ وہ صبح ورد و وضو کی ہے، نہ وہ شام جام و سبو کی ہے نہ یہ غم نیا، نہ ستم نیا، کہ تری جفا کا گلہ کریں یہ نظرتھی پہلے بھی مضطرب، یہ کسک تودل میں کبھو کی ہے کفِ باغباں پہ بہارِ گل کا ہے قرض پہلے سے بیشتر کہ ہر ایک پھول کے پیرہن، میں نمود میرے لہو کی ہے نہیں ‌خوفِ روزِ سیہ ہمیں، کہ ہے فیض ظرفِ نگاہ میں ابھی گوشہ گیر وہ اک کرن، جو لگن اُس آئینہ رُو کی ہے ۔ (فیض احمد فیض) بحر : بحرِ کامل مثمن سالم ارکان : متفاعلن ۔۔۔۔۔۔۔ متفاعلن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ متفاعلن ۔۔۔۔۔۔ متفاعلن اوزان : 21211 ۔۔۔۔۔ 21211 ۔۔۔۔۔ 21211 ۔۔۔۔۔۔ 21211 اشاراتِ تقطیع نہ ۔۔۔۔ ک ۔۔۔۔ سی ۔۔۔۔ پ ۔۔۔۔ زخ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 21211 م ۔۔۔۔۔ ع ۔۔۔۔۔۔ یاں ۔۔۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔ئی ۔۔۔۔۔۔۔ 21211 نہ ۔۔۔۔۔ ک ۔۔۔۔ سی ۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔ فک ۔۔۔۔۔۔۔ 21211 ر ۔۔۔۔۔ ر ۔۔۔۔۔۔ فو ۔۔۔۔۔۔ کی ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔ 21211 نہ ۔۔۔۔۔ ک ۔۔۔۔۔ رم ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔ ہم ۔۔۔۔۔۔ 21211 پہ ۔۔۔۔۔۔ ح ۔۔۔۔۔۔ بی ۔۔۔۔۔۔ ب ۔۔۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔۔ 21211 نہ ۔۔۔۔۔ ن ۔۔۔۔۔۔ گا ۔۔۔۔۔۔۔ہ ۔۔۔۔۔۔۔ ہم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 21211 پہ ۔۔۔۔ ع ۔۔۔۔ دو ۔۔۔۔۔ کی ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 21211 یہ بظاہر آسان نظر آنے والی ایک مشکل بحر ہے کیونکہ اس میں ہر مصرع میں چار بار ایک ہی رکن متفاعلن ( 21211) کی تکرار کے باعث ہر بار اغازِ رکن میں دو یک حرفی ( 1.1) ہے۔ سو ایسے میں رواں مصرع باندھنا  آسان نہیں ہوتا لیکن جب مشق کے بعد اس کے اوزان کی سمجھ اور الفاظ کے چناؤ پر دسترس حاصل ہو جائے تو بڑے مترنم اشعار تخلیق ہوتے ہیں ۔ اپنے ناقص علم کے مطابق کچھ اشارات پیش کرتا ہوں امید ہے کہ نئے لکھنے والوں کیلئے مددگار ثابت ہوں گے یاد رکھیں کہ یہ بحر ہو یا کوئی اور بحر، جہاں بھی مسلسل دو یک حرفی یعنی 1+1 موجود ہوں وہاں بیشمار الفاظ باندھے جا سکتے ہیں جیسے کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دو اکہرے الفاظ ۔۔۔۔۔۔ یہ کہ ۔۔۔۔۔۔۔ وہ تو ۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ ہے ۔۔۔۔۔۔ نہ یہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ یا دو اکہری آوازیں رکھنے والا ایک لفظ جیسے ۔۔۔۔۔۔۔۔ مرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ترا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ترے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کِیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔ سوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔ کبھی ۔۔۔۔۔ ابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سبھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کسی ۔۔۔۔۔ کوئی ۔۔۔۔۔۔ نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہیں ۔۔۔۔۔۔ وہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ یہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پس ِ ( پسے) ۔۔۔۔۔۔۔ سر ِ ( سرے) ۔۔۔۔۔۔۔۔ کف ِ ( کفے) ۔۔۔۔۔۔۔ در ِ ( درے) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ صف ِ (صفے) ۔۔۔۔۔۔۔ دم ِ (دمے ) یا پہلے یک رکنی لے مقام پر کوئی یک رکنی لفظ کے بعد دوسرے یک رکنی وزن کو اگلے دو رکنی وزن سے بھی جوڑا جا سکتا ہے ۔ جیسے ۔۔۔۔۔۔۔ ایک متفاعلن ( 21211) میں پس ِ مرگ میں ۔۔۔۔۔۔۔ دم ِ وصل تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سوئے حشر ہم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بھی باندھا جا سکتا ہے ( اس غزل میں اس کی مثال صف ِ زاہداں اور کف ِ باغباں ) ہے اور ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں یہاں وہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔ تو کہیں نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ مرا خدا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہ کوئی مرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ ترا سخن ۔۔۔۔۔۔۔۔ جیسے الفاظ کی بھی ترتیب ممکن ہے ، اوپر غزل میں اس کی مثال ( نہ کرم ہے ہم ) ہے “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔ ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر

  نہ کسی پہ زخم عیاں کوئی، نہ کسی کو فکر رفو کی ہے
نہ کرم ہے ہم پہ حبیب کا، نہ نگا ہ  ہم پہ عدو کی ہے

  صفِ زاہداں ہے تو بے یقیں، صفِ میکشاں ہے تو بے طلب
نہ وہ  صبح  ورد و  وضو کی  ہے، نہ  وہ  شام  جام و سبو کی  ہے

  نہ یہ غم  نیا، نہ ستم  نیا، کہ تری  جفا  کا گلہ کریں
یہ نظرتھی پہلے بھی مضطرب، یہ کسک تودل میں کبھو کی ہے

  کفِ باغباں پہ بہارِ گل کا ہے قرض پہلے سے بیشتر
کہ ہر ایک پھول کے پیرہن، میں نمود میرے لہو کی ہے

  نہیں ‌خوفِ روزِ سیہ ہمیں، کہ ہے فیض ظرفِ نگاہ میں
ابھی گوشہ گیر  وہ  اک کرن، جو لگن اُس  آئینہ رُو کی  ہے

۔

  (فیض احمد فیض)

  بحر : بحرِ کامل مثمن سالم

  ارکان : متفاعلن ۔۔۔۔۔۔۔ متفاعلن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ متفاعلن ۔۔۔۔۔۔ متفاعلن
اوزان : 21211 ۔۔۔۔۔ 21211 ۔۔۔۔۔ 21211 ۔۔۔۔۔۔  21211

اشاراتِ تقطیع

نہ ۔۔۔۔ ک ۔۔۔۔ سی ۔۔۔۔ پ ۔۔۔۔ زخ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  21211
م ۔۔۔۔۔ ع ۔۔۔۔۔۔ یاں ۔۔۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔ئی ۔۔۔۔۔۔۔  21211
نہ ۔۔۔۔۔ ک ۔۔۔۔ سی ۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔ فک ۔۔۔۔۔۔۔  21211
ر ۔۔۔۔۔ ر ۔۔۔۔۔۔ فو ۔۔۔۔۔۔ کی ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔  21211

نہ ۔۔۔۔۔ ک ۔۔۔۔۔ رم ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔ ہم ۔۔۔۔۔۔  21211
پہ ۔۔۔۔۔۔ ح ۔۔۔۔۔۔ بی ۔۔۔۔۔۔ ب ۔۔۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔۔  21211
نہ ۔۔۔۔۔ ن ۔۔۔۔۔۔ گا ۔۔۔۔۔۔۔ہ ۔۔۔۔۔۔۔ ہم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  21211
پہ ۔۔۔۔ ع ۔۔۔۔ دو ۔۔۔۔۔ کی ۔۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔  21211

یہ بظاہر آسان نظر آنے والی ایک مشکل بحر ہے کیونکہ اس میں ہر مصرع میں چار بار ایک ہی رکن متفاعلن ( 21211) کی تکرار کے باعث ہر بار اغازِ رکن میں دو یک حرفی ( 1.1) ہے۔ سو ایسے میں رواں مصرع باندھنا  آسان نہیں ہوتا لیکن جب مشق کے بعد اس کے اوزان کی سمجھ اور الفاظ کے چناؤ پر دسترس حاصل ہو جائے تو بڑے مترنم اشعار تخلیق ہوتے ہیں ۔ اپنے ناقص علم کے مطابق کچھ اشارات پیش کرتا ہوں امید ہے کہ نئے لکھنے والوں کیلئے مددگار ثابت ہوں گے

یاد رکھیں کہ یہ بحر ہو یا کوئی اور بحر، جہاں بھی مسلسل دو یک حرفی یعنی 1+1 موجود ہوں وہاں بیشمار الفاظ باندھے جا سکتے ہیں جیسے کہ ۔۔۔۔ دو اکہرے الفاظ ۔۔۔۔۔ یہ کہ ۔۔۔ وہ تو ۔۔۔۔۔۔ نہ ہے ۔۔۔۔ نہ یہ ۔۔۔۔ یا دو اکہری آوازیں رکھنے والا ایک لفظ جیسے ۔۔۔۔۔۔ مرا ۔۔۔۔۔۔ ترا ۔۔۔مرے ۔۔۔۔۔ ترے ۔۔۔۔۔ کِیا ۔۔۔۔۔ ہوا ۔۔۔۔۔ ہوئے ۔۔۔۔۔ سوئے ۔۔۔۔۔ کبھی ۔۔۔۔۔ ابھی ۔۔۔۔۔ سبھی ۔۔۔۔۔ کسی ۔۔۔۔۔ کوئی ۔۔۔۔۔ نہیں ۔۔۔۔۔ کہیں ۔۔۔۔۔۔ وہیں ۔۔۔۔۔ یہیں ۔۔۔۔۔۔ پس ِ ( پسے) ۔۔۔۔۔۔ سر ِ ( سرے) ۔۔۔۔۔ کف ِ ( کفے) ۔۔۔۔۔ در ِ ( درے) ۔۔۔۔۔ صف ِ (صفے) ۔۔۔۔ دم ِ (دمے ) یا پہلے یک رکنی لے مقام پر کوئی یک رکنی لفظ کے بعد دوسرے یک رکنی وزن کو اگلے دو رکنی وزن سے بھی جوڑا جا سکتا ہے ۔ جیسے ۔۔۔۔۔ ایک متفاعلن ( 21211) میں پس ِ مرگ میں ۔۔۔۔۔ دم ِ وصل تو ۔۔۔۔۔ سوئے حشر ہم ۔۔۔۔۔۔ بھی باندھا جا سکتا ہے ( اس غزل میں اس کی مثال صف ِ زاہداں اور کف ِ باغباں ) ہے اور ۔۔۔۔۔۔ میں یہاں وہاں ۔۔۔۔۔۔ تو کہیں نہیں ۔۔۔۔۔۔ وہ مرا خدا ۔۔۔۔۔ نہ کوئی مرا ۔۔۔۔۔ یہ ترا سخن ۔۔۔۔۔ جیسے الفاظ کی بھی ترتیب ممکن ہے ، اوپر غزل میں اس کی مثال ( نہ کرم ہے ہم ) ہے

“کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ ے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

تحریر فاروق درویش

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: