رموز شاعری کلاسیکل شاعری

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو۔ مرزا غالب ۔ بحر، اوزان و اصولِ تقطیع

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو نہ ہو جب دل ہی سینے میں تو پھر منہ میں زباں کیوں ہو وہ اپنی خو نہ چھوڑیں گے ہم اپنی وضع کیوں چھوڑیں سبک سر بن کے کیا پوچھیں کہ ہم سے سر گراں کیوں ہو کِیا غم خوار نے رسوا، لگے آگ اس محبّت کو نہ لاوے تاب جو غم کی، وہ میرا راز داں کیوں ہو وفا کیسی کہاں کا عشق جب سر پھوڑنا ٹھہرا تو پھر اے سنگ دل تیرا ہی سنگِ آستاں کیوں ہو قفس میں مجھ سے رودادِ چمن کہتے نہ ڈر ہمدم گری ہے جس پہ کل بجلی وہ میرا آشیاں کیوں ہو یہ کہہ سکتے ہو “ہم دل میں نہیں ہیں” پر یہ بتلاؤ کہ جب دل میں تمہیں تم ہو تو آنکھوں سے نہاں کیوں ہو غلط ہے جذبِ دل کا شکوہ دیکھو جرم کس کا ہے نہ کھینچو گر تم اپنے کو، کشاکش درمیاں کیوں ہو یہ فتنہ آدمی کی خانہ ویرانی کو کیا کم ہے ہوئے تم دوست جس کے، دشمن اس کا آسماں کیوں ہو یہی ہے آزمانا تو ستانا کس کو کہتے ہیں عدو کے ہو لیے جب تم تو میرا امتحاں کیوں ہو کہا تم نے کہ کیوں ہو غیر کے ملنے میں رسوائی بجا کہتے ہو، سچ کہتے ہو، پھر کہیو کہ ہاں کیوں ہو نکالا چاہتا ہے کام کیا طعنوں سے تُو غالب ترے بے مہر کہنے سے وہ تجھ پر مہرباں کیوں ہو مرزا اسد اللہ خان غالب بحر : ہزج مثمن سالم یعنی ہر مصرع میں مفاعیلن ( 2221) چار بار دہرایا جائے گا ہندسی اوزان : 2221 ….. 2221 ….. 2221 ….. 2221 . تقطیع : ک ۔۔۔۔ سی ۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔ دے ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221 کے ۔۔۔۔۔ دل ۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔۔ ئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221 ن ۔۔۔۔۔ وا ۔۔۔۔۔۔ سن ۔۔۔۔۔۔ جے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221 ف ۔۔۔۔ غاں ۔۔۔۔۔ کیو ۔۔۔۔۔۔۔۔ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221 نہ ۔۔۔۔ ہو ۔۔۔۔۔۔ جب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221 ہی ۔۔۔۔ سی ۔۔۔۔۔ نے ۔۔۔۔۔ میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221 تو ۔۔۔۔۔۔ پھر ۔۔۔۔۔۔۔ منہ ۔۔۔۔۔۔۔ میں ۔۔۔۔۔۔ 2221 ز ۔۔۔۔ باں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221 یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔  کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان کیلئے جس وزن کی سہولت  دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔  ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ  کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر  باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت  یا وصال کے ت یا لام کے نیچے  زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، پتھر کو پتر ،  چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا  فاروق درویش

کسی کو دے کے دل کوئی نوا سنجِ فغاں کیوں ہو
نہ ہو جب دل ہی سینے میں تو پھر منہ میں زباں کیوں ہو

وہ اپنی خو نہ چھوڑیں گے ہم اپنی وضع کیوں چھوڑیں
سبک سر بن کے کیا پوچھیں کہ ہم سے سر گراں کیوں ہو

کِیا غم خوار نے رسوا، لگے آگ اس محبّت کو
نہ لاوے تاب جو غم کی، وہ میرا راز داں کیوں ہو

وفا کیسی کہاں کا عشق جب سر پھوڑنا ٹھہرا
تو پھر اے سنگ دل تیرا ہی سنگِ آستاں کیوں ہو

قفس میں مجھ سے رودادِ چمن کہتے نہ ڈر ہمدم
گری ہے جس پہ کل بجلی وہ میرا آشیاں کیوں ہو

یہ کہہ سکتے ہو “ہم دل میں نہیں ہیں” پر یہ بتلاؤ
کہ جب دل میں تمہیں تم ہو تو آنکھوں سے نہاں کیوں ہو

غلط ہے جذبِ دل کا شکوہ دیکھو جرم کس کا ہے
نہ کھینچو گر تم اپنے کو، کشاکش درمیاں کیوں ہو

یہ فتنہ آدمی کی خانہ ویرانی کو کیا کم ہے
ہوئے تم دوست جس کے، دشمن اس کا آسماں کیوں ہو

یہی ہے آزمانا تو ستانا کس کو کہتے ہیں
عدو کے ہو لیے جب تم تو میرا امتحاں کیوں ہو

کہا تم نے کہ کیوں ہو غیر کے ملنے میں رسوائی
بجا کہتے ہو، سچ کہتے ہو، پھر کہیو کہ ہاں کیوں ہو

نکالا چاہتا ہے کام کیا طعنوں سے تُو غالب
ترے بے مہر کہنے سے وہ تجھ پر مہرباں کیوں ہو

مرزا اسد اللہ خان غالب

بحر : ہزج مثمن سالم یعنی ہر مصرع میں مفاعیلن ( 2221) چار بار دہرایا جائے گا
ہندسی اوزان : 2221 ….. 2221 ….. 2221 ….. 2221 .

تقطیع :

ک ۔۔۔۔ سی ۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔ دے ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221
کے ۔۔۔۔۔ دل ۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔۔ ئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221
ن ۔۔۔۔۔ وا ۔۔۔۔۔۔ سن ۔۔۔۔۔۔ جے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221
ف ۔۔۔۔ غاں ۔۔۔۔۔ کیو ۔۔۔۔۔۔۔۔ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221

نہ ۔۔۔۔ ہو ۔۔۔۔۔۔ جب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221
ہی ۔۔۔۔ سی ۔۔۔۔۔ نے ۔۔۔۔۔ میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221
تو ۔۔۔۔۔۔ پھر ۔۔۔۔۔۔۔ منہ ۔۔۔۔۔۔۔ میں ۔۔۔۔۔۔ 2221
ز ۔۔۔۔ باں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 2221

یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔  کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان کیلئے جس وزن کی سہولت  دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔  ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ  کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر  باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت  یا وصال کے ت یا لام کے نیچے  زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، پتھر کو پتر ،  چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

 فاروق درویش

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: