رموز شاعری کلاسیکل شاعری

کیا موافق ہو دوا عشق کے بیمار کے ساتھ ۔ کلام میرتقی میر ۔ بحر، اوزان اور تقطیع


کیا موافق ہو دوا عشق کے بیمار کے ساتھ
جی ہی جاتے نظر آئے ہیں اس آزار کے ساتھ

رات مجلس میں تری ہم بھی کھڑے تھے چپکے
جیسے تصویر لگا دے کوئی دیوار کے ساتھ

مر گئے پھر بھی کھلی رہ گئیں آنکھیں اپنی
کون اُس طرح مُوا حسرتِ دیدار کے ساتھ

شوق کا کام کھنچا دور کہ اب مہر مثال
چشمِ مشتاق لگی جائے ہے طیار کے ساتھ

ذکرِ گُل کیا ہے صبا اب کے خزاں ہیں ہم نے
دل کو ناچار لگایا ہے خس و خار کے ساتھ

کس کو ہر دم ہے لہو رونے کاہجراں میں دماغ
دل کو اک ربط سا ہے دیدہء خونبار کے ساتھ

میری اُس شوخ سے صحبت ہے بعینہ ویسی
جیسے بن جائے کسو سادے کو عیار کے ساتھ

دیکھیے کس کو شہادت سے سرافراز کریں
لاگ تو سب کو ہے اُس شوخ کی تلوار کے ساتھ

بے کلی اس کی نہ ظاہر تھی جو تُو اے بلبل
دم کشِ میر ہوئی اس لب و گفتار کے ساتھ

( حضرت میر تقی میر )

بحر : بحرِ رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع

اراکین : ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔۔۔۔ فَعلُن
ہندسی اوزان : 2212۔۔۔۔۔۔2211۔۔۔۔۔2211۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔22۔۔

اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل میں درج کردہ یہ آٹھ اوزان استعمال کرنے کی عروضی سہولت یا گنجائش موجود ہے ۔۔۔۔(1)۔۔۔ 2212 ….2211 ..2211….22 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔(2)۔۔۔۔۔۔ 2212 ….2211 ….2211 ….211 ۔۔۔۔۔۔(3)۔۔۔۔۔۔2212 ….1122….2211 …. 122 ۔۔۔۔۔۔۔(4)۔۔۔۔۔۔ 2212 ….2211…2211…..1211۔۔۔۔۔۔۔(5)۔۔۔۔۔ 2211 ….2211 ….2211….22 ۔۔۔۔۔۔۔(6)۔۔۔۔۔۔۔۔2211….2211..2211…122 ۔۔۔۔۔(7) ۔۔۔۔ 2211 ….2211 ….2211 …211 ۔۔۔۔۔(8)۔۔۔۔۔۔۔۔۔2211….2211….2211….1211۔۔۔

اشارات تقطیع

کیا موافق ہو دوا عشق کے بیمار کے ساتھ

کیا ۔۔۔۔م۔۔۔وا ۔۔۔ فق ۔۔۔۔۔۔۔ 2212
ہو ۔۔۔۔۔ د ۔۔۔وا ۔۔۔۔ عش ۔۔۔۔۔ 2211
ق ۔۔۔۔ ک۔۔۔ بی ۔۔۔ ما ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2211

ر ۔۔۔۔ کے ۔۔۔۔ سا ۔۔۔ تھ ۔۔۔۔۔۔۔ 1211 ۔۔۔۔ فعلن (22) کی بجائے فَعِلان (1211 ) استعمال کیا گیا ہے

جی ہی جاتے نظر آئے ہیں اس آزار کے ساتھ

جی ۔۔۔ ہی ۔۔۔ جا ۔۔تے ۔۔۔۔۔2212

نَ ۔۔۔۔ ظَ ۔۔۔۔۔ را ۔۔۔۔۔ ئے ۔۔۔۔۔۔ 2211 ۔۔۔۔۔۔۔۔ نظر آئے کو بریک اپ ( ن ۔ ظ ۔ را۔ ئے ) کے ساتھ ۔۔۔۔۔ ن (1) ظ(1) را (2) ئے (2) ۔۔۔۔۔۔ یہاں الف وصل گرانے کا عمل کیا گیا ہے کچھ اہل علم اس کیس میں اسے مد گرانا بھی کہتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ حضرت اقبال کے شعر کھول آنکھ زمین دیکھ فلک دیکھ فضا دیکھ میں ۔ اسی اصول کے تحت ” کھول آنکھ ” کو مفعول ( 122) ،، کھو لانکھ” ( کھو (2) ۔۔۔۔۔ لا (2) ۔۔۔۔۔۔ کھ (1) ۔۔ باندھا گیا ہے۔۔۔۔۔۔۔ اسی طرح آٹھویں شعر کے پہلے مصرع ،، دیکھیے کس کو شہادت سے سرافراز کریں ،، میں “سر افراز ” کو (س ۔۔ رف۔۔۔راز) باندھ کر الفِ وصل گرایا گیا ہے۔

ہیں ۔۔۔ ا ۔۔۔۔ سا ۔۔۔ زا ۔۔۔۔۔۔۔ 2211 ( یہاں بھی ” اس آزار ” میں الف وصل یا مد گرائی گئی ہے

ر ۔۔۔ کے ۔۔۔۔ سا ۔۔۔ تھ ۔۔۔۔ 1211 ۔۔۔۔ فعلن (22) کی بجائے فَعِلان (1211 ) استعمال کیا گیا ہے

یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح جس اسی طرح اگر کسی لفظ ے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

تحریر فاروق درویش

 

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: