رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

گلوں میں رنگ بھرے بادِ نو بہار چلے ۔۔ فیض احمد فیض، گلوں سے خون بہے بادِ اشک بارچلے ۔۔ فاروق درویش ۔ بحر، اوزان اور اصولِ تقطیع


laila1    گلوں سے خون بہے باد ِ اشک بار چلے
اٹھیں جنازے سیاست کا کاروبار چلے

    فریبِ دہر ہے قاتل کی مرثیہ خوانی
بنے مزارِ صنم قصرِ اقتدار چلے

    چڑھے جو درد کے دریا تو حسرتیں ڈوبیں
چلے جو تیر جگر چیر آر پار چلے

    الٹ رہے ہیں نقاب ِ رخ ِ حیات وہی
شباب جن کا لہو دے کے ہم نکھار چلے

    وضو کیا تھا شبِ وصل جن کے اشکوں سے
انہی کے دم سے مری رسم ِ سنگسار چلے

    ہر انقلاب کا منشور قتل ِ مفلس ہے
اٹھائے کاسہ ء شاہانہ تاجدار چلے

   کچھ اضطراب کی آتش میں جل گئے زندہ
کچھ انتظار ِ قیامت میں شب گذار چلے

   چراغ جلتے ہیں درویش تیری تربت پر
بہا کے اشک کہاں یار سوگوار چلے

   (فاروق درویش)

۔

   بحر :۔ بحرِ مجتث مثمن مخبون محذوف مقطوع

  ارکان بحر : مَفاعِلُن۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔۔۔۔مَفاعِلُن۔۔۔۔۔۔۔۔ فَعلُن
ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔ 2121۔۔۔۔۔۔۔2211۔۔۔۔۔2121۔۔۔۔۔۔۔22۔

آخری رکن یعنی فعلن (22 ) کی جگہ فعلان (122) ، فَعِلُن (211) اور فعِلان (1211) بھی آ سکتے ہیں ۔ اسی اصول کے تحت مطلع اور ہر شعر کے مصرع ثانی میں فعلن ( 22) کی جگہ فَعِلن ( 211) استعمال کیا گیا ہے۔

تقطیع

گ۔۔۔۔ لوں ۔۔۔۔ میں ۔۔۔۔ رن۔۔۔۔۔ 2121

گ ۔۔۔۔۔۔ بھ ۔۔۔۔۔ رے۔۔۔۔ با۔۔۔۔۔۔۔  2211
دے ۔۔۔۔۔۔نو ۔۔۔۔ ب ۔۔۔۔ہا ۔۔۔۔۔۔۔  2121
ر ۔۔۔۔۔چ ۔۔۔۔۔۔۔۔ لے ۔۔۔۔۔۔۔۔  211

ا ۔۔۔۔ٹھیں ۔۔۔۔۔ ج۔۔۔۔۔۔۔ نا ۔۔۔۔۔۔۔  2121
زے ۔۔۔س ۔۔۔۔۔۔۔ یا ۔۔۔۔۔۔ست ۔۔۔۔  2211
کا۔۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔ رو ۔۔۔۔۔۔ با ۔۔۔۔۔ 2121
ر ۔۔۔۔۔۔چ ۔۔۔۔۔۔۔ لے ۔۔۔۔۔۔۔ 211

    میری یہ غزل فیض کی اس غزل کی زمین میں لکھی  گئی ہے۔ ان دونوں غزلوں کی تقطیع کر لیں تواس بحر کو سمجھنے میں آسانی ہو گی

   گلوں میں رنگ بھرے ، بادِ نو بہار چلے
چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

    قفس اداس ہے یارو ، صبا سے کچھ تو کہو
کہیں تو بہرِ خدا آج ذکرِ یار چلے

   کبھی تو صبح ترے کنجِ لب سے ہو آغاز
کبھی تو شب سرِ کاکل سے مشکبار چلے

   بڑا ہے درد کا رشتہ یہ دل غریب سہی
تمہارے نام پہ آئیں گےغمگسار چلے

   جو ہم پہ گزری سو گزری مگر شبِ ہجراں
ہمارے اشک تری عاقبت سنوار چلے

  مقام فیض کوئی راہ میں جچا ہی نہیں
جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے

  (فیض احمد فیض)

  اصول تقطیع

یاد رکھئے کہ ” کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح جس اسی طرح اگر کسی لفظ ے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

اپنی رائے سے نوازیں

Featured

%d bloggers like this: