رموز شاعری کلاسیکل شاعری

ہستی اپنی حباب کی سی ہے۔ غزل میر تقی میر ۔ بحر، اوزان و اصول تقطیع


    ہستی اپنی حباب کی سی ہے
یہ نمائش سراب کی سی ہے

    نازکی اُس کے لب کی کیا کہئے
پنکھڑی اِک گلاب کی سی ہے

    بار بار اُس کے در پہ جاتا ہوں
حالت اب اضطراب کی سی ہے

    میں جو بولا، کہا کہ یہ آواز
اُسی خانہ خراب کی سی ہے

    میر اُن نیم باز آنکھوں میں
ساری مستی شراب کی سی ہے

    میر تقی میر

mir

    بحر : بحرِ خفیف مسدس مخبون محذوف مقطوع

   ارکان : فاعِلاتُن ۔۔۔ مُفاعِلُن ۔۔۔ فَعلُن
اوزان : 2212 ۔۔۔۔ 2121 ۔۔۔ 22

پہلے رکن یعنی فاعلاتن (2212) کی جگہ فعلاتن ( 2211) بھی جائز ہے، آخری رکن یعنی فعلن (22) کی جگہ فعلان ( 122) ، فَعِلن ( 211) اور فَعِلان (1211) بھی آسکتا ہے۔ یوں ایک ہی غزل یا نظم میں بیک وقت نیچے دئے گئے آٹھ وزن اکھٹے ہو سکتے ہیں ۔

۔1۔۔۔ 2212 ….2121….22 ۔
۔2 ۔۔۔۔ 2212 …2121 ….211 ۔
۔3 ۔۔۔2212 ….2121…. 122 ۔
۔4۔۔۔ 2212 ….2121 ….1211۔
۔5 ۔۔۔ 2211 ….2121 ….22 ۔
۔6۔۔۔۔2211….2121….. 122 ۔
۔7۔۔۔2211 …2121 …211
۔8 ۔۔2211….2121 ….1211۔

تقطیع

    ہستی اپنی حباب کی سی ہے
یہ نمائش سراب کی سی ہے

ہس ۔۔۔ تی ۔۔۔ اپ ۔۔۔نی ۔۔۔۔ 2212
ح ۔۔۔ با ۔۔۔ب ۔۔۔۔ کی ۔۔۔۔ 2121
سی ۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔ 22

یہ۔۔۔۔ ن۔۔۔ ما۔۔۔ ئش ۔۔۔۔۔ 2212
س ۔۔۔ را ۔۔۔ب ۔۔۔ کی ۔۔۔۔ 2121
سی ۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔ 22

    میں جو بولا، کہا کہ یہ آواز
اُسی خانہ خراب کی سی ہے

میں ۔۔۔ جو ۔۔۔ بو ۔۔۔ لا ۔۔۔۔ 2212
ک ۔۔۔ہا ۔۔۔ کہ ۔۔۔ یہ ۔۔۔۔۔ 2121
آ ۔۔وا۔۔۔۔ز ۔۔۔۔۔ 122 ۔۔ ( یہاں فعلن(22) کی بجائے فعلان (122) آیا ہے )۔

ا ۔۔سی ۔۔۔ خا ۔۔ نہ ۔۔۔۔ 2211 ( یہاں فعلاتن (2212) کی بجائے فعلاتن(2211) آیا ہے
خ ۔۔۔۔۔را۔۔۔ ب ۔۔۔۔ کی ۔۔۔۔ 2121
سی ۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔۔ 22

یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

تحریر فاروق دریش

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: