رموز شاعری کلاسیکل شاعری

یہ دل لگی بھی قیامت کی دل لگی ہوگی۔ غزل داغ دہلوی ۔ بحر و اوزان اصول تقطیع

یہ دل لگی بھی قیامت کی دل لگی ہوگی خدا کے سامنے جب میری آپ کی ہوگی تمام عمر بسر یوں ہی زندگی ہوگی خوشی میں رنج کہیں رنج میں خوشی ہوگی وہاں بھی تجھ کو جلائیں گے، تم جو کہتے ہو خبر نہ تھی مجھے جنت میں آگ بھی ہوگی تری نگاہ کا لڑنا مجھے مبارک ہو یہ جنگ و ہ ہے کہ آخر کو دوستی ہوگی سلیقہ چاہئے عادت ہے شرط اس کے لیئے اناڑیوں سے نہ جنت میں مے کشی ہوگی مزا ہے اُن کو بھی مجھ کو بھی ایسی باتوں کا جلی کٹی یوں ہی باہم کٹی چھنی ہوگی ہمارے کان لگے ہیں تری خبر کی طرف پہنچ ہی جائے گی جو کچھ بُری بھلی ہوگی مجھے ہے وہم یہ شوخی کا رنگ کل تو نہ تھا رقیب سے تری تصویر بھی ہنسی ہوگی ملیں گے پھر کبھی اے زندگی خدا حافظ خبر نہ تھی یہ ملاقات آخری ہوگی رقیب اور وفا دار ہو، خدا کی شان بجا ہے اُس نے جفا پر وفا ہی کی ہوگی بہت جلائے گا حوروں کو داغ جنت میں بغل میں اُس کی وہاں ہند کی پری ہوگی (نواب داغ دہلوی) بحر : مجثت مخبون مقصور یا محذوف ارکان بحر :۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مفاعلن ۔۔۔۔۔۔۔۔ فعلاتن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مفاعلن ۔۔۔۔۔۔۔۔ فعلن ہندسی اوزان ۔۔۔۔ 2121 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2211 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 2121 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 22 ۔ آخری رکن فعلن (22) کی جگہ فَعِلن (211) ، فَعِلان ( 1211) اور فعلان ( 122) بھی درست ہو گا تقطیع یہ ۔۔۔۔ دل ۔۔۔ ل ۔۔۔ گی ۔۔۔۔۔۔۔ 2121 ۔ بھی ۔۔۔۔ ق ۔۔۔۔ یا ۔۔۔ مت ۔۔۔۔ 2211 ۔ کی ۔۔۔۔ دل ۔۔۔ ل ۔۔۔ گی ۔۔۔۔۔ 2121 ۔ ہو ۔۔۔۔۔ گی ۔۔۔۔۔۔۔ 22 خ ۔۔۔۔ دا ۔۔۔۔ کے ۔۔۔۔ سا۔۔۔ 2121 ۔ م ۔۔۔ نے ۔۔۔ جب ۔۔۔۔ مے ۔۔۔ 2211 ۔ ری ۔۔۔۔ آ ۔۔۔۔ پ ۔۔۔ کی ۔۔۔۔۔۔ 2121 ۔ ہو ۔۔۔۔ گی ۔۔۔۔۔۔۔۔ 22 داغ دہلوی کی ایک مشہور غزل ۔ ” تمہارے خط میں نیا اک سلام کس کا تھا : نہ تھا رقیب تو آخر وہ نام کس کا تھا ” ۔ بھی اسی بحر اور وزن پر ہے۔ جس کی تقطیع کچھ یوں ہو گی۔ ت ۔۔۔۔ ما ۔۔۔ رے ۔۔۔۔۔۔ خط ۔۔۔۔ 2121 میں ۔۔۔۔۔۔ ن ۔۔۔ یا ۔۔۔۔ اک ۔۔۔۔۔ 2211 س ۔۔۔ لا ۔۔۔ م ۔۔۔۔۔ کس ۔۔۔۔۔۔ 2121 کا ۔۔۔۔۔۔۔۔ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ 22 نہ ۔۔۔۔ تھا ۔۔۔۔ ر ۔۔۔ قی ۔۔۔۔۔۔۔ 2121 ب ۔۔۔۔ تو ۔۔۔۔۔ آ ۔۔۔۔ خر ۔۔۔۔۔۔۔ 2211 وہ ۔۔۔۔۔ نا ۔۔۔ م ۔۔۔۔ کس ۔۔۔۔۔ 2121 کا ۔۔۔۔۔۔۔۔ تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ 22 یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ گا، گے، گی، کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع  کی بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔ ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔  اسی طرح اگر کسی لفظ ے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔ تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو

    یہ دل لگی بھی قیامت کی دل لگی ہوگی
خدا کے سامنے جب میری آپ کی ہوگی

    تمام عمر بسر یوں ہی زندگی ہوگی
خوشی میں رنج کہیں رنج میں خوشی ہوگی

    وہاں بھی تجھ کو جلائیں گے، تم جو کہتے ہو
خبر نہ تھی مجھے جنت میں آگ بھی ہوگی

    تری نگاہ کا لڑنا مجھے مبارک ہو
یہ جنگ و ہ ہے کہ آخر کو دوستی ہوگی

    سلیقہ چاہئے عادت ہے شرط اس کے لیئے
اناڑیوں سے نہ جنت میں مے کشی ہوگی

    مزا ہے اُن کو بھی مجھ کو بھی ایسی باتوں کا
جلی کٹی یوں ہی باہم کٹی چھنی ہوگی

    ہمارے کان لگے ہیں تری خبر کی طرف
پہنچ ہی جائے گی جو کچھ بُری بھلی ہوگی

    مجھے ہے وہم یہ شوخی کا رنگ کل تو نہ تھا
رقیب سے تری تصویر بھی ہنسی ہوگی

    ملیں گے پھر کبھی اے زندگی خدا حافظ
خبر نہ تھی یہ ملاقات آخری ہوگی

    رقیب اور وفا دار ہو، خدا کی شان
بجا ہے اُس نے جفا پر وفا ہی کی ہوگی

    بہت جلائے گا حوروں کو داغ جنت میں
بغل میں اُس کی وہاں ہند کی پری ہوگی

  (نواب داغ دہلوی)

   بحر : مجثت مخبون مقصور یا محذوف

   ارکان بحر :۔۔۔ مفاعلن ۔۔۔ فعلاتن ۔۔۔ مفاعلن ۔۔۔ فعلن
ہندسی اوزان ۔۔۔ 2121 ۔۔۔ 2211 ۔۔۔۔ 2121 ۔۔۔ 22 ۔

  آخری رکن فعلن (22) کی جگہ فَعِلن (211) ، فَعِلان ( 1211) اور فعلان ( 122) بھی درست ہو گا

تقطیع

یہ ۔۔ دل ۔۔۔ ل ۔۔۔ گی۔۔۔۔ 2121 ۔
بھی ۔۔۔ ق ۔۔۔ یا ۔۔۔ مت ۔۔۔ 2211 ۔
کی ۔۔۔ دل ۔۔۔ ل ۔۔۔ گی۔۔۔۔ 2121 ۔
ہو ۔۔۔ گی ۔۔۔ 22

خ ۔۔۔ دا ۔۔۔ کے ۔۔۔۔ سا۔۔۔ 2121 ۔
م ۔۔۔ نے ۔۔۔ جب ۔۔۔ مے ۔۔۔ 2211 ۔
ری ۔۔۔ آ ۔۔۔ پ ۔۔۔ کی ۔۔۔۔ 2121 ۔
ہو ۔۔۔ گی ۔۔۔ 22

داغ دہلوی کی ایک مشہور غزل ۔ ” تمہارے خط میں نیا اک سلام کس کا تھا : نہ تھا رقیب تو آخر وہ نام کس کا تھا ” ۔ بھی اسی بحر اور وزن پر ہے۔ جس کی تقطیع کچھ یوں ہو گی۔

ت ۔۔۔۔ ما ۔۔۔ رے ۔۔۔۔ خط ۔۔۔ 2121
میں ۔۔۔۔ ن ۔۔۔ یا ۔۔۔۔ اک ۔۔۔۔ 2211
س ۔۔۔ لا ۔۔۔ م ۔۔۔۔۔ کس ۔۔۔۔ 2121
کا ۔۔۔ تھا۔۔۔۔ 22

نہ ۔۔۔۔ تھا ۔۔۔۔ ر ۔۔۔ قی ۔۔۔۔ 2121
ب ۔۔۔۔ تو ۔۔۔۔۔ آ ۔۔۔۔ خر۔۔۔۔ 2211
وہ ۔۔۔۔ نا ۔۔۔ م ۔۔۔ کس ۔۔۔۔ 2121
کا ۔۔۔۔ تھا ۔۔۔۔ 22

یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ گا، گے، گی، کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع  کی بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

 اسی طرح اگر کسی لفظ ے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

6 Comments

Click here to post a comment

Leave a Reply

  • فاروق بھائی واللہ بہت خوب

    کیا کمال کی غزل فرمائی ہے۔ بہت شکریہ

    درج ذیل اشعار تو بہت ہی پسند آئے:

    یہ دل لگی بھی قیامت کی دل لگی ہوگی
    خدا کے سامنے جب میری آپ کی ہوگی

    تری نگاہ کا لڑنا مجھے مبارک ہو
    یہ جنگ و ہ ہے کہ آخر کو دوستی ہوگی

    سلیقہ چاہئے عادت ہے شرط اس کے لیئے
    اناڑیوں سے نہ جنت میں مے کشی ہوگی

    مزا ہے اُن کو بھی مجھ کو بھی ایسی باتوں کا
    جلی کٹی یوں ہی باہم کٹی چھنی ہوگی

    ہمارے کان لگے ہیں تری خبر کی طرف”
    پہنچ ہی جائے گی جو کچھ بُری بھلی ہوگی”

    بہت جلائے گا حوروں کو داغ جنت میں
    بغل میں اُس کی وہاں ہند کی پری ہوگی

    • برادر محترم یہ نواب داغ دہلوی کی غزل ہے، داغ صاحب کا اردو سخن کے اساتذہ میں شامل ہیں اور حسن و عشق کے موضوع پر انہیں ایک کمال حاصل رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

  • برادر فاروق صاحب

    اس نوآموز و کم علم کی تصحیح کا ممنون ہوں۔

    دراصل اس پوسٹ کی سرخی پر زیادہ دھیان دیئے بغیر یہ سمجھا کہ آپ نے نواب داغ دہلوی صاحب کی غزل کی زمین میں غزل فرمائی ہے۔ دوسری وجہ اس مغالطے کی یہ سمجھ پڑتی ہے کہ آپ کی غزلیات و کلام اور اساتذہ کے کلام میں معیار کی بہت مماثلت و مشابہت پائی جاتی ہے۔ جس میں تمیز کرنا مجھ کم پڑھ کی بساط علمی سے باہر ہے۔

    مجھ پر یہ کہنا نہ صرف میرا فرض بلکہ مجھ پر قرض بھی ہے کہ آپ کی شاعری با مقصد، بلند خیالی، امید اور عصر حاضر کے تقاضو ں سے عہدہ براء ہونے کی ترجمان ہے۔

    • برادر یہ آپ کا حسنِ ظن ہے وگرنہ یہ فقیر تو محظ ایک مبتدی ہے۔ ٹوٹی پھوٹی زبان میں وہی لکھنے کیلئے کوشش کرتا ہوں جو ضمیر کی آواز ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سدا خوش آباد و خوش مراد رہیں

  • Kya inhon ne apny ek jlsy me kaha tha ke “Mujy ye sharaf hasil he ke me Iqbal ka ustad hun. Iqbal ne mery paas apni ek gazal islah ke liy bheji magar us me islah ki gunjaish hi nhi thi.” (is darja mukammil thi)
    Sach he to SubhanAllah SubhanAlalh.
    Mene ye kahin se prha tha shyd.

Featured

%d bloggers like this: