کلامِ اقبال کی زمین میں میری حسبِ حال غزل بحر و اوزان اوراصولِ تقطیع

 اقبال کی زمین میں میری غزل احباب کی نذر

   اس شہر ِ صدآشوب میں اتری ہے قضا دیکھ
فرعون بنے بیٹھے ہیں مسند کے خدا دیکھ

     بیٹھا ہے ہما  رہزن  و غدار کے سر پر
معصوم پرندے کی ہے معصوم ادا دیکھ

   سوئی ہے کفن اوڑھے جو مزدور کی بیٹی
افلاس کے ہاتھوں پہ جلا رنگِ حنا دیکھ

    ہر لحظہ بدلتے ہوئے دستور یہ منشور
قاتل کی شہیدوں کے مزاروں پہ دعا دیکھ

   ابلیس ِ زماں تخت نشیں ہیں کہ گداگر
دنیائے سیاست کے یہ کشکول و گدا دیکھ

   ہر جرم کی تعزیر و سزا لکھتے ہیں اغیار
مشرق کے اسیروں کو یہ مغرب کی عطا دیکھ

   جو بحر ِ طلاطم تھے، جزیروں کے ہیں قیدی
زندان ِ صدف، موج ِ بلا، رقص ِ قضا دیکھ

   درویش کی غزلوں میں ہے اقبال کا پیغام
،، کھول آنکھ زمیں دیکھ فلک دیکھ فضا دیکھ،،

   ( فاروق درویش )

  بحر :- ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

  ارکان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ فعولن
ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 221 ۔۔۔

  آخری رکن فعولن ( 221 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فعولان ( 1221 ) بھی جائز ہو گا

اس ۔۔۔۔۔ شہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  122
ص ۔۔۔۔ صدا ۔۔۔۔۔۔ شو ۔۔۔ ب ۔۔۔۔۔۔ 1221 ( یہاںصد آشوب کا الف گرا کر صدا شوب باندھا گیا ہے، عروض میں اسے الف گرانا یا کچھ سخنور  مد گرانا بھی کہتے ہیں )
میں ۔۔۔ ات۔۔۔۔ ری۔۔۔۔ ہے ۔۔۔   1221
ق۔۔۔۔۔ ضا ۔۔۔۔۔ دے ۔۔۔۔۔ کھ ۔۔۔۔۔۔ 1221 ( مفاعلن کی بجائے فعولان استعمال کیا گیا ہے)

فر۔۔۔۔۔ عو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   122
ب ۔۔۔۔ نے ۔۔۔۔۔ بے ۔۔۔ ٹھے ۔۔۔   1221
ہیں ۔۔۔ مس ۔۔۔۔۔ ند ۔۔۔۔۔ کے ۔۔۔۔۔   1221
خ ۔۔۔۔۔۔۔۔ دا ۔۔۔۔دے ۔۔۔۔ کھ ۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ( مفاعلن کی بجائے فعولان استعمال کیا گیا ہے)

  اصول تقطیع

“یاد رکھئے کہ ” کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ ے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

Comments

comments

3 Comments on "کلامِ اقبال کی زمین میں میری حسبِ حال غزل بحر و اوزان اوراصولِ تقطیع"

  1. Tinker Khan says:

    یہ صرف ایک غزل نہیں بلکہ آج کے حالات کی سچی تصویر ہے

    بہن نے درست فرمایا۔ سو فیصد متفق

    لاجواب کلام

  2. بہت خوب نقشہ کشی کی ہے آج کے دور کی۔
    زبردست کلام سر۔

Got something to say? Go for it!


Hit Counter provided by recruiting services
Follow

Get every new post delivered to your Inbox

Join other followers:

%d bloggers like this: