رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

بلبل نہ گل نہ حسن ہیں باغ و بہار کے۔ بہ زمینِ فیض غزل درویش ۔ بحر و اوزان اور اصول تقطیع


بلبل نہ گل نہ حسن ہیں باغ و بہار کے
صحرائے غم میں ورد ہیں پروردگار کے

مسند نشیں نے بھیجے ہیں پھرجام زہر کے
لکھیں گے سوئے دار ستم تاجدار کے

آفت رسیدہ بستیوں کے لٹ گئے مکیں
دریا میں خواب ڈوب گئے ہونہار کے

رقصاں ہیں آج خلق کے چہرے پہ وحشتیں
دیکھے ہیں ہم نے رنگِ فتن اقتدار کے

اس شہر بے چراغ کی صبحیں بھی ہیں سیاہ
پڑھتی ہے شام نوحے شبِ اشک بار کے

آب ِ حیات خضر سے مانگیں کہاں سے ہم
پیاسے ہیں لب فرات پہ ہر شیر خوار کے

تاریخ لکھ رہی ہے چمن کی جو داستاں
دیں گے گواہی سوختہ گل مرغزار کے

دشت ِ جہاں سے امرت ِ خوباں تلاش کی
درویش ہم فقیر ہوئے کوئے یار کے

فاروق درویش

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بحر ۔۔ بحر مضارع مثمن اخرب مکفوف محذوف

ارکان ۔۔۔۔۔ مَفعُول ۔۔۔۔۔ فاعِلات ۔۔۔۔۔۔ مَفاعِیل ۔۔۔۔۔ فاعِلُن
اوزان ۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔۔۔ 1212 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 212
آخری رکن میں‌ فاعلن ۔۔۔ 212 ۔۔۔۔ کی جگہ فاعلان ۔۔ 2121 ۔۔۔۔ استعمال کرنا بھی درست ہے جیسا کہ پانچویں شعر میں ’’ سیاہ’’ کا ، ہ اور چھٹے شعر میں کون کا اضافی نون اسی اصول کے تحت باندھا گیا ہے ۔۔۔۔۔۔

نئے لکھنے والوں کی راہنمایی کیلئے تقطیع کے اشارات

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل  ِ فیض احمد فیض

دونوں جہاں تیری محبت میں ہار کر
وہ جا رہا ہے کوئی شب غم گزار کے

ویراں یے میکداں جم و ساغر اداس ہے
تم کیا گئے روٹھ گئے دن بہار کے

اک فرصت گناہ ملی وہ بھی چار دن
دیکھے ہیں ہم نے حوصلے پروردگار کے

دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کر دیا
تجھ سے بھی دلفریب ہیں غم روزگار کے

 بھولے سے مسکرا تو دیئے تھے وہ آج فیض
مت پوچھ ولولے دل ناکردہ کار کے

تقطیع غزلِ فیض احمد فیض

بل ۔۔۔۔ بل ۔۔۔۔۔۔نہ ۔۔۔۔۔ 122
گل۔۔۔۔نہ ۔۔۔۔۔حس۔۔۔۔۔ ن۔۔۔۔۔1212
ہیں۔۔۔۔۔ با۔۔۔۔غو ۔۔۔۔ب ۔۔۔۔۔۔ 1221
ہا۔۔۔۔۔ر۔۔۔۔۔۔۔ کے۔۔۔۔۔۔ 212

صح۔۔۔۔۔را ۔۔۔۔۔۔ئے۔۔۔۔۔122
غم۔۔۔۔۔ میں۔۔۔۔۔ور۔۔۔۔ د ۔۔۔۔ 1212
ہیں۔۔۔۔۔۔پر۔۔۔۔۔۔۔ور۔۔۔۔۔۔ د ۔۔۔۔۔1221
گا۔۔۔۔۔۔ ر ۔۔۔۔۔۔ کے ۔۔۔۔۔ 212

یاد رکھئے کہ ” کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے ، ئے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

 

اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

1 Comment

Click here to post a comment

Leave a Reply

  • تاریخ لکھ رہی ہے چمن کی جو داستاں
    دیں گے گواہی سوختہ گل مرغزار کے
    ٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭٭

    محترم جناب! ہمیشہ کی طرح نہ صرف نئے لکھنے والوں کی رہنمائی ، بلکہ شعر و شاعری سے ایک عمومی دلچسپی رکھنے والوں کے لئے ، اس خوبصورت طرحی غزل پر مبارکباد اور دلی شکریہ قبول فرمائیں۔

    ہر چند کہ یہ میر ی استعطاعت سے باہر ہے کہ اس غزل پر کوئی بامعنی تبصرہ کر سکوں، لیکن کہنا چاہوں گا کہ یوں تو غزل کے تمام تراشعار ہی قابلِ داد و ستائش ہیں، لیکن درجِ ذیل اشعارنے دل کو بہت چُھویا ، ایک کیفیت طاری کی ، فکر و خیال اور سوچ و بچار کی جانب مجبور کیا جو میری رائے میں ایک بہترین علمی تخلیق کا طرہ امتیاز ہوا کرتا ہے۔

    بلبل نہ گل نہ حسن ہیں باغ و بہار کے
    صحرائے غم میں ورد ہیں پروردگار کے

    مسند نشیں نے بھیجے ہیں پھرجام زہر کے
    لکھیں گے سوئے دار ستم تاجدار کے

    آفت رسیدہ بستیوں کے لٹ گئے مکیں
    دریا میں خواب ڈوب گئے ہونہار کے

    رقصاں ہیں آج خلق کے چہرے پہ وحشتیں
    دیکھے ہیں ہم نے رنگِ فتن اقتدار کے

    اس شہر بے چراغ کی صبحیں بھی ہیں سیاہ
    پڑھتی ہے شام نوحے شبِ اشک بار کے

    آب ِ حیات مانگ کے لائے خضر سے کون
    پیاسے ہیں لب فرات پہ ہر شیر خوار کے
    (اس مصرعہ سے متعلق مجھے مزید سمجھ بوجھ درکار ہے۔ اگر اجازت ہو تو بذریعہ ذاتی پیغام مزید رہنمائی چاہوں گا۔شکریہ
    )
    تاریخ لکھ رہی ہے چمن کی جو داستاں
    دیں گے گواہی سوختہ گل مرغزار کے

    دشت ِ جہاں سے امرت ِ خوباں تلاش کی
    درویش ہم فقیر ہوئے کوئے یار کے

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: