Category - رموز شاعری

حالات حاضرہ رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

جہانِ شب ہے دھواں صبحِ انقلاب بنو۔ جلا دوتختِ بتاں دستِ احتساب بنو

جہان ِ شب ہے دھواں صبح ِ انقلاب بنو جلا دو تخت ِ بتاں دست ِ احتساب بنو لہو کے دیپ جلاؤ کہ شب طویل ہوئی محل سے روشنی چھینو سحر کی تاب بنو چراغِ زخم سے جب نور کی...

رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

بلبل نہ گل نہ حسن ہیں باغ و بہار کے۔ بہ زمینِ فیض غزل درویش ۔ بحر و اوزان اور اصول تقطیع

جناب فیض احمد فیض کی زمین میں غزل لکھنا کم از کم مجھ جیسے حقیر و کوتاہ علم بندے کے بس کا روگ ہرگز نہیں ۔  ایک طرحی مشاعرے کیلئے ان کی مشہورغزل ” دونوں...

حالات حاضرہ رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

وہی فرنگی نظامِ ظلمت، وہی ہیں ناسور و روگ سائیں ۔ فاروق درویش

وہی فرنگی نظامِ ظلمت، وہی ہیں ناسور و روگ سائیں وہی مداری وہی تماشے، وہی ہیں سہمے سے لوگ سائیں ندیدے رہبر ہیں یا لٹیرے،خُدا کی بستی کے چرخ و قاتل وطن کے غدار...

جواں ترنگ دورحاضر کے شعرا رموز شاعری

سخن کا پیرہن پہنا دیا کس نے خموشی کو۔ از سیدہ سارا غزل ۔ بحر و اوزان

سخن کا پیرہن پہنا دیا کس نے خموشی کو ترستی ہے زباں گونگے دلوں کی گرمجوشی کو ہوئے آرائشِ جاں کی بدولت کو بہ کو رسوا کہ عریانی سمجھتے ہیں ہم اپنی جامہ پوشی کو جب...

رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

ہم عشق زدہ سوختہ جاں ہجرگزیدہ۔ غزل فاروق درویش ۔ اوزانِ بحر،اصولِ تقطیع

ہم عشق زدہ، سوختہ جاں، ہجر گزیدہ وہ کعبہ ء جاں حسن کہ دیدہ نہ شنیدہ زلفوں کے حجاب اٹھے کہ میخانے کھلے ہیں آتش ہے شب ِ وصل کہ مشروب ِ کشیدہ نورنگی ء دوراں ہے کہ...