Category - میری غزلیں اورعروض

رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

ہم عشق زدہ سوختہ جاں ہجرگزیدہ۔ غزل فاروق درویش ۔ اوزانِ بحر،اصولِ تقطیع

ہم عشق زدہ، سوختہ جاں، ہجر گزیدہ وہ کعبہ ء جاں حسن کہ دیدہ نہ شنیدہ زلفوں کے حجاب اٹھے کہ میخانے کھلے ہیں آتش ہے شب ِ وصل کہ مشروب ِ کشیدہ نورنگی ء دوراں ہے کہ...

رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

دریوزہ گری حرفہء درویش وقلندر۔ غزل فاروق درویش ۔۔۔۔ ڈاکٹر عبدالقدیر کے نام

در یوزہ گری حرفہء درویش و قلندر کشکولیء شب پیشہ ء دارا و سکندر   غدار ِ حرم فتنہ ء مغرب کے مصاحب خیرات ِ صلیبی ہے منافق کا مقدر   کھلتے ہیں یہ اسرار ِ قلندر...

رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

لیلیٰ ترے صحراؤں میں محشر ہیں ابھی تک ۔ فاروق درویش ۔ بحر، اوزان اور اصولِ تقطیع

    لیلیٰ ترے صحراؤں میں محشر ہیں ابھی تک اور بخت میں ہر قیس کے پتھر ہیں ابھی تک      اب تک ہیں یہیں ننگِ وطن جعفر و صادق میسور و پلاسی کے وہ منظر ہیں ابھی تک...

رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

گلوں میں رنگ بھرے بادِ نو بہار چلے ۔۔ فیض احمد فیض، گلوں سے خون بہے بادِ اشک بارچلے ۔۔ فاروق درویش ۔ بحر، اوزان اور اصولِ تقطیع

    گلوں سے خون بہے باد ِ اشک بار چلے اٹھیں جنازے سیاست کا کاروبار چلے     فریبِ دہر ہے قاتل کی مرثیہ خوانی بنے مزارِ صنم قصرِ اقتدار چلے     چڑھے جو درد کے...

رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

دل قلندرہے جگرعشق میں تندورمیاں. از فاروق درویش ۔ بحر، اوزان اوراشاراتِ تقطیع

دل قلندر ہے جگر عشق میں تندور میاں شوق ِ دیدار روانہ ہے سوئے طور میاں گل بدن شعلہ ء افلاس میں جل جاتے ہیں جسم بازار میں بک جاتے ہیں مجبور میاں دل کے زندانوں سے...

رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

بے دام ہم بکے سرِ بازارعشق میں – غزل فاروق درویش ۔ بحر، اوزان اوراشاراتِ تقطیع

    بے دام ہم بکے سر ِ بازار عشق میں رسوا ہوئے جنوں کے خریدار عشق میں    زنجیریں بن گئیں میری آزادیاں حضور زندان ِ شب ہے کوچہ ء دلدارعشق میں     درپیش پھر سے...