رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

حسن نادم ہے جہاں کر کے جفا میرے بعد – فاروق درویش


    حسن نادم  ہے جہاں کر کے جفا میرے بعد
عشق رسوائے زمانہ نہ ہوا میرے بعد

    آتشِ عشق سے روشن ہوئے صحرائے جہاں
کون دے پائے گا ظلمت میں ضیا میرے بعد

    درد خوشبو کی طرح دل میں مقیّد ہے مرے
دل کے زندانوں سے آئے گی صدا میرے بعد

    ریگِ صحرا سے تیمّم مرے چھالوں نے کیا
دشت سے پھوٹے گی خوشبوئے حنا میرے بعد

    عشق دکھلاتا  ہے نیرنگِ تماشائے جنوں
میرے مقتل میں تماشہ یہ ہوا میرے بعد

    حسن سے دل کی سدا معرکہ آرائی رہی
کیا جلائے گا وہ تربت پہ دیا میرے بعد

   ہر نفس رنگ بدلتے ہوئے اصنامِ جفا
شب کے بازار میں بیچیں گے وفا میرے بعد

   روح مرتی نہیں انسان کے مر جانے سے
میرے قاتل پہ بھی یہ راز کھلا میرے بعد

   میں نہیں میر، نہ اقبال، نہ جالب نہ فراز
پھر بھی گونجے گا سخن میرا سدا میرے بعد

   منزلِ نور کی راہوں میں ہے رقصاں درویش
شہر ِ ظلمات میں رقصاں ہے قضا میرے بعد

 ( فاروق درویش)

یہ غزل میر تقی میر کی غزل۔ ” آ کے سجّادہ نشیں قیس ہوا میرے بعد​ ۔۔نہ رہی دشت میں خالی کوئی جا میرے بعد ” ​، کی زمین یعنی اسی بحر اور ردیف و قافیہ میں لکھی گئی ہے۔ یاد رہے کہ کچھ ناقدین مذکورہ غزل کو میر تقی میر کی غزل نہیں مانتے۔ لیکن ایسے ناقدین میر تقی میر کی شاعری کے اوصاف لئے،  فنی اعتبار سے لاجواب اس  شاندارغزل کے شاعر کا نام بتانے سے بھی قاصر ہیں۔ جس سے اس گمان کو تقویت ملتی ہے کہ یہ غزل میر تقی میر کی ہی ہے۔

  بحر : بحرِ رمل مثمن مخبون محذوف مقطوع
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اراکین : ۔۔۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔۔ فَعلُن
ہندسی اوزان : 2212 ۔۔۔۔2211 ۔۔۔۔2211 ۔۔۔۔۔22۔۔

اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل میں درج کردہ یہ آٹھ اوزان استعمال کرنے کی عروضی سہولت یا گنجائش موجود ہے

  ۔1 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔ فعلُن ۔۔ 2212 …2211 ..2211 … 22 ۔
۔2 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔ فَعِلُن ۔۔2212 …2211 ….2211 …211 ۔
۔3 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔ فَعلان۔۔2212 …2211 …2211 …122 ۔
۔4 ۔۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔ فَعِلان 2212 …2211…2211…1211۔
۔5 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔ فعلُن ۔۔2211 …2211 ….2211 …22 ۔
۔6 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔ فعلان۔۔2211…2211..2211…. 122 ۔
۔7 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔ فَعِلُن۔۔2211 ..2211 …. 2211 …  211۔
۔8 ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔ فَعِلان۔۔2211…2211….2211…1211۔

   اشارات برائے تقطیع

حس۔۔۔۔۔ ن ۔۔ نا ۔۔۔۔۔۔ دم ۔۔۔۔۔فاعلاتن ۔۔  2212
ہے۔۔۔۔۔ج۔۔۔ ہا ۔۔۔۔ کر ۔۔۔۔ فعلاتن ۔۔۔۔   2211
کے ۔۔۔۔ جں۔۔۔۔ فا۔۔۔ مے ۔۔۔۔ فعلاتن ۔۔۔۔   2211
رے ۔۔۔۔۔ بع۔۔۔۔۔۔ د ۔۔۔۔۔۔ فعلان ۔۔۔ ۔122۔

عش۔۔۔۔ق ۔۔۔۔۔ رس۔۔۔۔۔۔وا۔۔۔ فاعلاتن ۔۔۔   2212
ئے ۔۔۔ ز۔۔۔۔۔۔۔۔ ما ۔۔۔۔نہ۔۔۔۔۔ فعلاتن ۔۔۔۔ 2211۔
نہ۔۔۔۔ ہ۔۔۔۔۔۔ وا۔۔۔۔۔ مے ۔۔۔۔۔۔ فعلاتن ۔۔۔۔ 2211
۔۔رے ۔۔۔۔۔ بع۔۔۔۔۔۔۔ د ۔۔۔۔۔۔ فعلان ۔۔۔ 122۔

نوٹ: مطلع میں دونوں جگہ اور ہر شعر کے مصرع ثانی میں اوپر دی گئی عروضی سہولت نمبر 3 کے تحت آخری فعلن ( 2.2) کی بجائے فعلان ۔(2.2.1۔) باندھا گیا ہے، اور یہ سلسلہ تمام اشعار کے ہر مصرع ثانی تک چلتا ہے۔

اصولِ تقطیع

یاد رکھئے کہ ” کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا  ہے۔ لیکن ” ء ” کی اضافت سے پہلے والے لفظ کے آخری “ہ” کو گرانا لازم ہے ۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

فاروق درویش

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: