بین الاقوامی رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

غزل مولانا رومی ۔ منظوم ترجمہ فاروق درویش


     مولانا جلال الدین رومی رحمۃ اللہ  کی فارسی غزل کے اشعار کا اردو ترجمہ اور میری عاجزانہ کاوش، ان اشعار کا منظوم ترجمہ
    شعر : از مولانا رومی رحمۃ اللہ علیہ

  نہ من بیہودہ گردِ کوچہ و بازار می گردم
مذاقِ عاشقی دارم، پئے دیدار می گردم

    نثری اردو ترجمہ : میں بلا وجہ ہی آوارہ اپنے محبوب کے کوچہ و بازار میں یونہی نہیں، جنونِ عشق میں مست  اپنے محبوب کے دیدار کیلیے گھومتا ہوں

       منظوم ترجمہ : از فاروق درویش

  میں عاشق بے سبب بازار ِ جاناں میں نہیں گرداں
لیے پھرتا ہوں دل میں شوق ِ دیدارِ رخِ جاناں
۔۔۔۔۔۔۔
       شعر : از مولانا رومی رحمۃ اللہ علیہ

 خدایا رحم کُن بر من، پریشاں وار می گردم
خطا کارم گنہگارم، بہ حالِ زار می گردم

نثری اردو ترجمہ : اے خداوند مجھ پر رحم فرما کہ میں پریشاں حال و آوارہ ہوں۔ میری خطار کاری و گناہ گاری اور یہ حالِ زار ہی میری        گردشوں کا سبب بن گیے ہیں۔

     منظوم ترجمہ : از فاروق درویش

 خدایا رحم کرمجھ پر، پریشاں حال و خستہ ہوں
بنے اسباب میری گردشوں کے کارِ صد عصیاں
۔۔۔۔۔۔۔

    شعر : از مولانا رومی رحمۃ اللہ علیہ

 شرابِ شوق می نوشم، بہ گردِ یار می گردم
سخن مستانہ می گویم، ولے ہشیار می گردم

  نثری اردو ترجمہ : میں شرابِ عشق پیتا اور اپنے یار کا طواف کرتا ہوں۔ اگرچہ میں اس شراب عشق کے نشے میں مستانہ وار گفتگو کرتا ہوں لیکن اتنے ہوش باقی ہیں کہ میں جانتا ہوں کہ میں اپنے یار کے گرد گھومتا ہوں۔

   منظوم ترجمہ : از فاروق درویش

 میں رندِ عشق، مستانہ کلام انداز ہے میرا
طوافِ یار سے پی کر بھی واقف ہیں مگر اوساں
۔۔۔۔۔۔۔

 شعر : از مولانا رومی رحمۃ اللہ علیہ

 گہے خندم گہے گریم، گہے اُفتم گہے خیزم
مسیحا در دلم پیدا و من بیمار می گردم

نثری اردو ترجمہ : کبھی تو میں ہنستا ہوں، کبھی روتا ہوں۔ کبھی گرتا ہوں اور کبھی سنبھلتا ہوں۔ میں بیمارِ عشق ہوں مگر میرے دل میں میرا مسیحا پیدا ہو گیا ہے اور میں اپنے مسیحا کے گرد گھومتا یعنی طواف کرتا  ہوں۔

  منظوم ترجمہ : از فاروق درویش

 کبھی ہنستا ، کبھی روتا، کبھی گر کر سنبھلتا ہوں
مسیحا دل میں در آیا، میں اس کے گرد ہوں رقصاں
۔۔۔۔۔۔۔

   شعر : از مولانا رومی رحمۃ اللہ علیہ

 بیا جاناں عنایت کُن تو مولانائے رُومی را
غلامِ شمس تبریزم، قلندر وار می گردم

 نثری اردو ترجمہ : اے جاناں مجھے دیدار دینے کیلیے آ اور مجھ رومی پر اپنی عنایت کر دے۔ میں حضرت شمس تبریز رحمۃ اللہ کا مرید و غلام ہوں اور تیرے دیدار کیلیے کسی قلندر کی طرح گھوم رہا ہوں۔

  منظوم ترجمہ : از فاروق درویش

 عطا ہو دید کی میں طالبِ دیدار و عرفاں ہوں
غلامِ شمسِ تبریزی، میں رومی،  بندہء یزداں

 مولانا  رومی رح کی غزل اور میرے منظوم ترجمے کے اشعار،  بحر ہزج مثمن سالم میں ہیں۔ جس کے افاعیل یا ارکان اور ہندسی اوزان درج ذیل ہیں
مفاعیلن ۔۔۔ مفاعیلن ۔۔۔ مفاعیلن۔۔۔ مفاعیلن ۔
۔2221…2221….2221… 2221

( فاروق درویش)
0322-4061000 

اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

2 Comments

Click here to post a comment

Leave a Reply

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: