بین الاقوامی حالات حاضرہ میری غزلیں اورعروض

گستاخ ِ نبی فتنہ و فنکار پہ لعنت : فاروق درویش


گستاخ ِ نبی فتنہ و فنکار پہ لعنت
بدبخت صلیبی ترے افکار پہ لعنت

ہر شاتمِ قران پہ افلاک کی پھٹکار
توہین ِ رسالت کے سزاوار پہ لعنت

جو ذات ہے عشاق کے ایمان کا محور
اس ذات کے دشمن سگ ِسنسار پہ لعنت

اس دورِ صدآشوب کی سرکار پہ لعنت
ہر ننگِ وطن شاہ کے دربار پہ لعنت

افلاس کی قبروں سے یہ آتی ہیں صدائیں
لاشوں سے سجے بھوک کے بازار پہ لعنت

بک جائے جہاں دخترِ مشرق سر بازار
اس محشرِ عصمت کے خریدار پہ لعنت

جب نوحہ ء بلبل پہ گلابوں کے ہوں ماتم
پھر کیوں نہ کریں والیء گلزار پہ لعنت

جب خلقِ خدا راج کرے بن کے گداگر
کر کاسہ و کشکول کے انبار پہ لعنت

اے فتنہ ءامریکہ کی حرفت کے مصاحب
اے دست ِ فرنگی ترے کردار پہ لعنت

سلطانی ءجمہور کہ اغیار کا منشور
دو رنگی ءمے خانہ و میخوار پہ لعنت

مفرور وطن دہشتِ اغیار کے کرتار
ہر فتنہ ء مغرب کے وفادار پہ لعنت

سن دیس بھگت نعرہء دم مست قلندر
اس دھرتی کے ہر قاتل و غدار پہ لعنت

درویش و فقیروں پہ سدا رحمتِ افلاک
محلوں میں بسے زر کے خریدار پہ لعنت

فاروق درویش

اپنی رائے سے نوازیں

%d bloggers like this: