رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

دریوزہ گری حرفہء درویش وقلندر۔ غزل فاروق درویش ۔۔۔۔ ڈاکٹر عبدالقدیر کے نام


در یوزہ گری حرفہء درویش و قلندر
کشکولیء شب پیشہ ء دارا و سکندر
 
غدار ِ حرم فتنہ ء مغرب کے مصاحب
خیرات ِ صلیبی ہے منافق کا مقدر
 
کھلتے ہیں یہ اسرار ِ قلندر سوئے مقتل
ملبوس فقیری ہے فقط عشق کی چادر
 
آزادی ء خوش رنگ ہے بدرنگ غلامی
خوں رنگ سیاست کا ہے گل رنگ مقدر
 
میخانہء دم مست و خودی کعبہء مومن
اک قطرہ ء انگور ہے کافر کا سمندر
 
دو رنگیء رہبر ہیں کہ نیرنگ ِ کلیسا
ست رنگی محلات ہیں آشوب کے مصدر
 
محشر میں شہیدان ِ وفا، تخت پہ قاتل
ساحل پہ ہے بے گور و کفن اصغر ِ مادر
 
افسانہ ء شاہان ِ ہوس، عبرت ِ عالم
نے قبر ہے چنگیز کی نے تاج ِ سکندر
 
لکھتا ہوں ستاروں کی جلی شب کی کہانی
خورشید کا ماتم ہے دم ِِ نوحہء چندر
 
( فاروق درویش )

بحر :- ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

  ارکان ۔۔۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔۔ فعولن
ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 221 ۔۔

  آخری رکن فعولن ( 221 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فعولان ( 1221 ) بھی جائز ہو گا

در ۔۔۔۔۔ یو۔۔۔۔۔۔۔زہ ۔۔۔۔۔۔۔۔  122
گ ۔۔۔۔۔۔۔ ری ۔۔۔۔۔۔حر۔۔۔۔فہ ۔۔۔۔۔۔۔  1221
ء ۔۔۔ در ۔۔۔۔ وی۔۔۔۔ شو۔۔۔۔  1221
ق۔۔۔۔۔۔۔لن ۔۔۔۔۔در ۔۔۔۔۔۔۔۔  221

کش۔۔۔۔۔ کو ۔۔۔۔۔۔۔ لی ۔۔۔۔۔۔۔  122
ء ۔۔۔۔ شب ۔۔۔ پے ۔۔۔۔۔۔۔ ۔شہ ۔۔۔۔۔۔۔  1221
ء ۔۔۔دا۔۔۔۔۔۔ را ۔۔۔۔۔ و ۔۔۔۔۔۔۔۔۔  1221
س۔۔۔۔۔۔۔۔ کن ۔۔۔۔در۔۔۔۔۔۔۔۔۔  221

 اصول تقطیع

“یاد رکھئے کہ ” کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

 اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

 

اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

5 Comments

Click here to post a comment

Leave a Reply

  • بہت خوب تحاریر ہیں سر. کیا آپ میرے ٹوٹے پھوٹے کلام کی اصلاح فرمادیں گے. ؟ میں شاعری سیکھنا چاہتا ہوں. امید ہے کہ جواب اثبات میں ہوگا.
    اصلاح کیسے اور کہاں ہوسکے گی اسکا طریقہ بھی تحریر فرما دیجئے ممنون ہونگا.
    مخلص, بسمل.

  • OO Madar chood darwaish shiko ki ulad baighart punjabies girls ki baat kiun nahein karta jinho ney uk mein shadi ki hai aapass mein aur lahore ki 2 girls ki baat kiun nahein karta jinho ney shadi ki thee aapass mein baigharat randi ki nasal punjabies.

  • حق آگیا اور باطِل مٹ گیابیشک باطِل تو مٹنے کیلئے ہے.
    پی ایس 128 سے طالبانی اتحاد مسلم لیگ نواز، جماعت اسلامی ،تحریک انصاف اور نام نہاد امنّ پسند عوامی نیشنل پارٹی کے مشترکہ امیدوار کی شکست اور ایم کیو ایم کے امیدوار سید وقار حسین شاہ کی کامیابی کراچی کے حق پرستوں کا مذہبی جنونیت،فرقہ واریت،متعصّب عدلیہ اور کراچی کی ملکیت کے دعوے داروں کے منہ پر ایک شاندارتھپڑ ہے.

Featured

%d bloggers like this: