حالات حاضرہ رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

جہانِ شب ہے دھواں صبحِ انقلاب بنو۔ جلا دوتختِ بتاں دستِ احتساب بنو


  جہان ِ شب ہے دھواں صبح ِ انقلاب بنو
جلا دو تخت ِ بتاں دست ِ احتساب بنو

  لہو کے دیپ جلاؤ کہ شب طویل ہوئی
محل سے روشنی چھینو سحر کی تاب بنو

  چراغِ زخم سے جب نور کی ندی پھوٹے
شبوں کے چاند، سحر خیز آفتاب بنو

  تڑپ رہے ہو جزیرہ نما تنوروں میں
ہوا کے دوش پہ اڑتے ہوئے سحاب بنو

  اگر ہو لیلیٰ تو صحرا میں چھوڑ دو محمل
بنو جو قیس تو پھرعشق کی کتاب بنو

  عتابِ زرد میں خاموشی خودکشی ہو گی
سکوتِ مرگ میں نعرہء اضطراب بنو

  جو ظلمتوں کے بیاباں سے ڈر گئے درویش
انہیں کہو کہ اٹھو جہدِ بو تراب بنو

  فاروق درویش

۔

  بحر :۔ بحرِ مجتث مثمن مخبون محذوف مقطوع
ارکان بحر : مَفاعِلُن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مَفاعِلُن۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ فَعلُن
ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔۔۔ 2121۔۔۔۔۔۔۔۔2211۔۔۔۔۔۔۔2121۔۔۔۔۔۔۔۔22۔

آخری رکن یعنی فعلن (22 ) کی جگہ فعلان (122) ، فَعِلُن (211) اور فعِلان (1211) بھی آ سکتے ہیں ۔ اسی اصول کے تحت مطلع اور ہر شعر کے مصرع ثانی  میں فعلن ( 22) کی جگہ فَعِلن ( 211) استعمال کیا گیا ہے۔

تقطیع

ج۔۔۔ ہاں ۔۔۔ نے ۔۔۔ شب ۔۔۔ ۔۔۔۔  2121
ہے ۔۔۔ دھ ۔۔۔ واں۔۔۔  صب ۔۔۔۔  2211
حے ۔۔ ان ۔۔۔۔ ق ۔۔۔ لا ۔۔۔۔۔ 2121۔۔۔
ب ۔۔۔۔ ن ۔۔۔۔۔ و ۔۔۔۔۔۔ 211 ( فعلن ۔22۔ کی جگہ فَعِلن۔ 211۔ آیا ہے )۔

ج ۔۔۔ لا۔۔۔ دو ۔۔۔ تخ۔۔۔۔۔  2121
تے ۔۔۔ ب ۔۔۔ تاں ۔۔۔ دس ۔۔۔  2211
تے ۔۔۔۔ اح ۔۔۔ ت ۔۔۔ سا ۔۔۔  2121
ب ۔۔۔ ن ۔۔۔ و ۔۔۔۔ 211 (  فعلن۔ 22 ۔۔ کی جگہ فَعِلن ۔ 211۔ آیا ہے )۔

تقطیع کرتے ہوئے یاد رکھئے کہ ۔۔۔۔۔۔۔ “کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ گا، گے،تقط گی، کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع کی بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔
ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر، آنکھ کو آک اور چھیڑے کوچیڑے پڑھا جائے گا

 

اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

Add Comment

Click here to post a comment

Leave a Reply

%d bloggers like this: