رموز شاعری میری غزلیں اورعروض

کس پردہ ء افلاک میں جانے ہے وہ پنہاں ۔ غزلِ درویش


  کس پردہ ء افلاک میں جانے ہے وہ پنہاں
اک نغمہ ء بے تاب جو ہونٹوں کا ہے ارماں

  پیغام کہاں لائیں گے نظروں کے پیامی
آنکھوں سے بہت دور ہے لیلی کا شبستاں

   مر جائیں گے اس سلسلہء شب میں الجھ کر
آشفتہ سر و دشت یہاں گھر بھی مرا یاں

   اس عشق میں جلنے کا تماشہ بھی عجب ہے
شعلہ نہ نظر آئے مگر راکھ ہوئی جاں

   جمہور کا دستور ہے بس مرگِ مساوات
افلاس کی آندھی میں کہاں جشنِ چراغاں

   پوشاکِ قلندر میں ہیں احرار کہ میخوار
ایوانِ مسلماں ہیں کہ مندر کے نگہباں

   جائے گا کہاں بھاگ کے اس قیدِ قفس سے
صحرا کے مسافر ترا خیمہ بھی ہے زنداں

   دیتے ہیں خبر حشر کی صحراؤں کے عقرب
اب شہرِ خموشاں ہے ترا کوچہ ء جاناں

   والعصر سے والناس کی تفسیر عیاں دیکھ
ہنستی ہے ترے حال پہ اب ظلمتِ دوراں

  چڑھتا ہوا سورج ہے سلگتا ہوا آشوب
دریائے فغاں پر ہے بپا شامِ غریباں

  تو عشق ہے صحرائے محبت ہے ترا دیس
اٹھتا ہے دھواں قیس ہوئے چاک گریباں

  آتش ہے جو ہر عشق زدہ قلب و جگر میں
روشن اسی شعلے سے ہے درویش کا عرفاں

فاروق درویش

  بحر :- ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

 ارکان ۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔ فعولن
ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 1221 ۔۔۔۔۔ 221 ۔

  آخری رکن فعولن ( 221 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فعولان ( 1221 ) بھی جائز ہو گا

کس ۔۔۔۔۔ پر۔۔۔۔۔۔۔دہ ۔۔۔۔۔۔۔۔   122
ء ۔۔۔۔۔۔۔ اف ۔۔۔۔۔۔ لا ۔۔۔۔ ک ۔۔۔۔۔   1221
مے ۔۔۔ جا ۔۔۔۔ نے۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔   1221
وہ ۔۔۔۔۔ پن ۔۔۔۔۔ ہا ۔۔۔۔۔   221

اک ۔۔۔۔۔ نغ ۔۔۔۔۔ مہ ۔۔۔۔۔   122
ء ۔۔۔۔ بے ۔۔۔۔۔۔ تا ۔۔۔۔۔ ب ۔۔۔۔۔   1221
جو ۔۔۔ ہو ۔۔۔۔۔ ٹو ۔۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔۔   1221
ہے ۔۔۔۔۔۔۔ ار ۔۔۔۔ ما۔۔۔۔۔۔۔۔   221

 اصول تقطیع

“یاد رکھئے کہ ” کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

 

اپنی رائے سے نوازیں

<head>
<script async src=”//pagead2.googlesyndication.com/pagead/js/adsbygoogle.js”></script>
<script>
(adsbygoogle = window.adsbygoogle || []).push({
google_ad_client: “ca-pub-1666685666394960”,
enable_page_level_ads: true
});
</script>
<head>

Featured

%d bloggers like this: