میری غزلیں اورعروض

والعصر سے والناس کی تفسیر جہاں ہے ۔ غزل فاروق درویش


والعصر سے والناس کی تفسیر جہاں ہے
والفجر کے خوں ناک تسلسل کا زماں ہے
 
والّیلِ اِذا یَسر، صبح ِ غم کے کفن پر
مغرب سے نکلتے ہوئے سورج کا گماں ہے
 
احزاب کے باغی ہیں مہاراج و مسیحا
میخانہ ء ابلیس، پس ِ پردہ عیاں ہے
 
انسانَ لفی خُسر ہے آئینہ ء عالم
توحید کی گفتار پہ تکرار ِ بتاں ہے
 
لاحول ولا قوۃ افرنگ کا منشور
شاہوں کا وظیفہ ہے، یزیدوں کی اذاں ہے
 
کافر کیلیے جہد ِ مسلماں ہے قیامت
مسند کی مسلمانی فقط سود و زیاں ہے
 
کیا تاج محل، بخت ِ سکندر کی حقیقت
اک نوحہ ء تاریخ ہے ، اک مرگ ِ جواں ہے
 
جگنو ہیں گل و لالہ ہیں شبنم ہے چمن میں
َاقبال کا شاہیں ہے نہ بلبل کی فغاں ہے
 
شکوے پہ مرے فتوی لیے آئے ہیں واعظ
شرمندہ ء اطوار کوئی شیخ کہاں ہے
 
مزدور کی بیٹی کا پس ِ مرگ جنازہ
اٹھا تو ملا داج میں تربت کا مکاں ہے
 
درویش حرارت سے پگھل جائے گا محشر
مصلوب سوئے حشر لیے تیر کماں ہے
 

(فاروق درویش)

  بحر :- ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

 ارکان ۔۔۔۔۔ مفعول ۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔ مفاعیل ۔۔۔۔۔ فعولن
ہندسی اوزان ۔۔۔ 122 ۔۔۔ 1221 ۔۔۔ 1221 ۔۔۔ 221 ۔

  آخری رکن فعولن ( 221 ) کی جگہ عمل تسبیغ کے تحت فعولان ( 1221 ) بھی جائز ہو گا، جیسا کہ اس غزل کے چوتھے شعر کے پہلے مصرع سے واضع ہے

ول ۔۔۔۔۔ عص۔۔۔۔۔۔۔ر ۔۔۔۔۔۔۔۔   122
سے ۔۔۔۔۔۔۔ ون ۔۔۔۔۔۔ نا ۔۔۔۔ س ۔۔۔۔۔   1221
کی ۔۔۔ تف ۔۔۔۔ سی۔۔۔۔ ر ۔۔۔۔   1221
ج ۔۔۔۔۔ ہا ۔۔۔۔۔ ہے ۔۔۔۔۔   221

ول ۔۔۔۔۔ فج ۔۔۔۔۔ ر ۔۔۔۔۔   122
کے ۔۔۔۔ خو ۔۔۔۔۔۔ نا ۔۔۔۔۔ ک ۔۔۔۔۔   1221
ت ۔۔۔ سل ۔۔۔۔۔ سل ۔۔۔۔۔ کا ۔۔۔۔۔۔۔   1221
ز ۔۔۔۔۔۔۔ما ۔۔۔۔ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔   221

 اصول تقطیع

“یاد رکھئے کہ ” کیا” اور “کیوں” کو دو حرفی یعنی “کا” اور “کوں ” کے وزن پر باندھا جائے گا ۔ کہ، ہے، ہیں، میں، وہ، جو، تھا، تھے، کو، کے ، تے ، رے اور ء جیسے الفاظ دو حرفی وزن پر بھی درست ہیں اور انہیں ایک حرفی وزن میں باندھنا بھی درست ہیں ۔ لہذا ان جیسے الفاظ کیلئے مصرع میں ان کے مقام پر بحر میں جس وزن کی سہولت دستیاب ہو وہ درست ہو گا ۔

ایسے ہی “ے” یا “ی” یا “ہ” پر ختم ہونے والے الفاظ کے ان اختتامی حروف کو گرایا جا سکتا ہے ۔ یعنی جن الفاظ کے آخر میں جے ، گے، سے، کھے، دے، کھی، نی، تی، جہ، طہ، رہ وغیرہ ہو ان میں ے، ی یا ہ کو گرا کر انہیں یک حرفی وزن پر باندھنا بھی درست ہو گا اور اگر دوحرفی وزن دستیاب ہو تو دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ لیکن خیال رہے کہ “ہ” پر ختم ہونے والے جن الفاظ کے بعد ہمزہ “ء” کی اضافت ہو گی۔ ان کے “ہ” کا گرانا لازم ہو گا۔۔

اسی طرح اگر کسی لفظ کے اختتامی حرف کے نیچے زیر ہو اسے دو حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے اور یک حرفی وزن پر بھی باندھا جا سکتا ہے۔ ( مثال : دشت یا وصال کے ت یا لام کے نیچے زیر کی صورت میں انہیں دشتے اور وصالے پڑھا جائے گا ۔ ایسے الفاظ کی اختتامی ت یا لام کو بحر میں دستیاب وزن کے مطابق یک حرفی یا دو حرفی باندھنے کی دونوں صورتیں درست ہوں گی ) ۔

تقطیع کرتے ہوئے یہ بات دھیان میں رہے کہ نون غنہ اور ھ تقطیع میں شمار نہیں کئے جائیں گے یعنی تقطیع کرتے ہوئے ، صحراؤں کو صحراؤ ، میاں کو میا، خوں کو خو، کہیں کو کہی ۔ پتھر کو پتر اور چھیڑے کو چیڑے پڑھا جائے گا

طرح اور صبح جیسے کچھ الفاظ کو بوزن فعو یعنی 1+2 اور بوزن فعل یعنی 2+1 بھی باندھا جا سکتا ہے۔

(فاروق درویش ۔۔ واٹس ایپ کنٹیکٹ  00923224061000 )

 
اپنی رائے سے نوازیں

About the author

admin

Add Comment

Click here to post a comment

Leave a Reply

Featured

%d bloggers like this: