گفتگو درد کی عالم کی زباں ٹھہرے گی ۔ غزل فاروق درویش، بحر و اوزان اور اصول تقطیع

TweetShare thisFacebookTwitterLinkedInWhatsApp  گفتگو درد کی عالم کی زباں ٹھہرے گی داستاں عشق کی مقتل کا بیاں ٹھہرے گی   شاہِ ست رنگ نے اک حشر سجایا ہے نیا بندگی دہر کی اب حکم رواں ٹھہرے گی    شیخ و واعظ کا بیاں، فلسفہ ء عشقِ بتاں شاعری دیر و کلیسا کی اذاں ٹھہرے گی   … گفتگو درد کی عالم کی زباں ٹھہرے گی ۔ غزل فاروق درویش، بحر و اوزان اور اصول تقطیع پڑھنا جاری رکھیں