کلاسیکل شاعری

حسنِ مہ گرچہ بہ ہنگامِ کمال، اچّھا ہے ۔ کلام غالب، بحر و اوزان اور اصولِ تقطیع ۔ فاروق درویش

حسنِ مہ، گرچہ بہ ہنگامِ کمال، اچّھا ہے اس سے میرا مہِ خورشید جمال اچّھا ہے بوسہ دیتے نہیں، اور…

Read More »

ناوک انداز جدھر دیدہ ء جاناں ہوں گے۔ غزل مومن ۔ بحر و اوزان ، تقطیع

ناوک انداز جدھر دیدہ ء جاناں ہوں گے نیم بسمل کئی ہوں گے، کئی بے جاں ہوں گے تابِ نظّارہ…

Read More »

جس سر کوغرور آج ہے یاں تاجوری کا ۔ غزل میرتقی میر ۔ بحر، اوزان، اصول تقطیع

جس سر کو غرور آج ہے یاں تاج وری کا کل اس پہ یہیں شور ہے پھر نوحہ گری کا…

Read More »

کیا موافق ہو دوا عشق کے بیمار کے ساتھ ۔ کلام میرتقی میر ۔ بحر، اوزان اور تقطیع

کیا موافق ہو دوا عشق کے بیمار کے ساتھ جی ہی جاتے نظر آئے ہیں اس آزار کے ساتھ رات…

Read More »

دیکھ تو دل کہ جاں سے اٹھتا ہے ۔ میر تقی میر

دیکھ تو دل کہ جاں سے اُٹھتا ہے یہ دھواں سا کہاں سے اٹھتا ہے گور کس دل جلے کی…

Read More »
Back to top button

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker