کبھی ساحل تو کبھی سیل ِ خطر ٹھہرے گی ۔ سیدہ سارا غزل

Share this
کبھی ساحل تو کبھی سیل ِ خطر ٹھہرے گی
بحر ِ ہستی میں اگر موج ِ سفر ٹھہرے گی
 
ورطہء شب سے نکل آئی اگر کشتیء صبح
ساحل ِ نور پہ ٹھہرے گی اگر ٹھہرے گی
 
سینہء حسن میں پوشیدہ ہے جو آگ ابھی
تیشہء عشق سے گلرنگ سحر ٹھہرے گی
 
کشتیء جاں کو سلامت نہ اگر لے کے گئی
بیکلی دل کے سمندر کا بھنور ٹھہرے گی
 
ہم سر ِ شام چراغوں میں تجھے دیکھیں گے
اب کسی گل پہ نہ تارے پہ نظر ٹھہرے گی
 
دل کی فریاد کو لازم ہے خموشی ہی غزل
ورنہ اس دہر میں یہ کار ِ ہنر ٹھہرے گی
 
سیدہ سارا غزل
۔
بحر رمل مثمن سالم مخبون محذوف : فاعلاتن/ فعِلاتن /فعِلاتن/ فعلن ( فَعِلن ۔ فَعِلان ۔ فعلان)۔
ہندسی اوزان : 2212..(2211)..2211..2211..22 (211، 1211،122)۔

اس بحر میں پہلے رکن یعنی فاعلاتن ( 2212 ) کی جگہ فعلاتن ( 2211 ) اور آخری رکن فعلن (22) کی جگہ , فعلان ( 122)، فَعِلن (211 ) اور فَعِلان (1211) بھی آ سکتا ہے۔ یوں اس بحر کی ایک ہی غزل میں  یہ آٹھ اوزان استعمال کرنے کی عروضی سہولت یا گنجائش موجود ہے

 ۔1 ۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فعلُن ۔۔۔ 2212 …2211 ..2211 … 22 ۔
۔2 ۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلُن ۔۔2212 …2211 ….2211 …211 ۔
۔3 ۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔ فعلاتُن ۔۔۔ فَعلان۔۔2212 …2211 …2211 …122 ۔
۔4 ۔۔ فاعِلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلان 2212 …2211…2211…1211۔
۔5 ۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فعلُن ۔۔2211 …2211 ….2211 …22 ۔
۔6 ۔۔ فعلاتُن ۔۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔ فعلان۔۔2211…2211. 2211. 122 ۔
۔7 ۔۔ فعلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلُن ۔۔2211 ..2211 ..  2211… 211
۔8 ۔۔ فعلاتُن ۔۔۔ فَعِلاتُن۔۔۔۔ فَعِلاتُن ۔۔۔ فَعِلان۔۔2211…2211….2211…1211۔

اپنی رائے سے نوازیں

صحت اور فٹنس کیلئے معیاری پراڈکٹس ایمازون سے آن لائن خریدیں

admin

عالمی امن اور اتحاد اسلامی کا پیامبر دیش بھگت ، نام فاروق رشید بٹ اور تخلص درویش ہے، سابقہ بینکر ، بلاگر ، شاعر اور ورڈپریس ایکسپرٹ ہوں ۔ آج کل ہوٹل مینجمنٹ کے پیشہ سے منسلک ہوں ۔۔۔۔۔

Related Articles

Leave a Reply

Back to top button
Close
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker