جواں ترنگ

سخن کا پیرہن پہنا دیا کس نے خموشی کو ۔ سیدہ سارا غزلؔ ہاشمی

سخن کا پیرہن پہنا دیا کس نے خموشی کو ترستی ہے زباں گونگے دلوں کی گرمجوشی کو ہوئے آرائشِ جاں…

Read More »

اپنی ہستی کو میں افلاک نما کیوں جانوں ۔ بہزاد حسن شہاب

لہر کو آنکھ ملی اس نے سمندر دیکھا اور پھراپنے تحیر کے بھنور میں ڈوبی اپنی ہستی کو سمندر ہی…

Read More »

ستارہ کیسے چمک سے نہ واسطہ رکھتا۔ غزل فلائیٹ لفٹیننٹ بہزاد حسن شہاب

ستارہ کیسے چمک سے نہ واسطہ رکھتا چراغ ِ شب سے میں خود کو کہاں جدا رکھتا سفیر ِ دشت…

Read More »

میں اپنے آئینہء دل کے روبرو بیٹھا : فلائیٹ لفٹیننٹ بہزاد حسن شہاب

میں اپنے آئینہء  دل کے روبرو بیٹھا خود اپنی شکل کو تکتا ہوں ہوبہو بیٹھا مئے نظارہ کی خاطر اس…

Read More »

کبھی ساحل تو کبھی سیل ِ خطر ٹھہرے گی ۔ سیدہ سارا غزل

کبھی ساحل تو کبھی سیل ِ خطر ٹھہرے گی بحر ِ ہستی میں اگر موج ِ سفر ٹھہرے گی  …

Read More »

مقفل ہی سہی لیکن نظر کے اسم ِ اعظم سے . سیدہ سارا غزل

مقفل ہی سہی لیکن نظر کے اسم ِ اعظم سے کھلے ہیں وقت کے زنداں میں دروازے کئی ہم سے…

Read More »
Back to top button
Close
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker